منگل 6ستمبر 2011ئ
پشاور ( پ ر )عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر سینیٹر افراسیاب خٹک نے کہا ہے کہ اے
این پی کی صوبائی حکومت صوبے کے تمام اضلاع کی متوازن ترقی کے ایجنڈے پر عمل پیرا
ہے ‘ کراچی میں امن پاکستان کی معاشی ترقی کے لئے نہایت ہی اہم ہے اس لئے کراچی میں
جلد قیام امن وقت کا تقاضہ ہے ‘ وہ وزیر اعلیٰ اینکسی میں اپنی زیر صدارت اے این پی
ضلع ٹانک اور اے این پی ضلع کوہاٹ کی تنظیموں کے عہدیداروں سے خطاب کررہے تھے ‘ ا
اے این پی ضلع ٹانک کے صدر خان گل بھٹنی ‘ جنرل سیکرٹری ممتاز خان اور سابق رکن
اسمبلی و پارٹی کے رہنما حبیب اللہ کنڈی ‘ صوبائی وزیر ہاﺅسنگ امجد آفریدی ‘ رکن
قومی اسمبلی پیر دلاور ‘ ضلع کوہاٹ کے صدر عنایت قریشی اور جنرل سیکرٹری مسعود خان
اجلاس میں شریک تھے ‘جبکہ اے این پی کے صوبائی جنرل سیکرٹری تاج الدین خان ‘ صوبائی
ڈپٹی جنرل سیکرٹری مختیار خان یوسفزئی اور صوبائی سیکرٹری اطلاعات ارباب محمد طاہر
خان خلیل بھی اس موقع پر موجود تھے ‘ اجلاسوںمیں متعلقہ اضلاع میں ترقیاتی منصوبوں
‘ تنظیمی صورتحال اور دونوں اضلاع کےلئے وزیر اعلیٰ امیر حید رخان ہوتی کے مجوزہ
خصوصی پیکج پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا ‘ اجلاسوں سے خطاب کرتے ہوئے اے این پی کے
صوبائی صدر سینیٹر افراسیاب خٹک نے کہا کہ بدقسمتی سے گزشتہ تین سالہ دور میں ایک
طرف دہشت گردی اور دوسری جانب قدرتی آفات کی وجہ سے صوبے میں وہ ترقی نہ ہوسکی جو
اے این پی کی صوبائی حکومت کا مطم ¿ح نظر تھا لیکن اب ترقی کے نئے دور کا آغاز
ہوچکا ہے اور 18ویں ترمیم کے نتیجے میں اپنے وسائل پر اختیار ملنے اور پن بجلی کے
خالص منافع کی وصولی سے صوبے میں ترقی کی نئی راہیں کھلیں گی ‘ انہوں نے کہا کہ
وزیر اعلیٰ امیر حیدر خان ہوتی کی جانب سے مختلف اضلاع کےلئے ترقیاتی پیکجز کے
اعلان سے متعلقہ اضلاع کے مسائل اور تکالیف کافی حد تک کم کرنے میں مدد ملے گی ‘
انہوں نے کراچی کی صورتحال پر تشویش کا اظہار کیا اور کہا کہ صرف یہ نہیں کہ کراچی
ملک کی معاشی شہہ رگ ہے بلکہ اس کی تعمیر و ترقی میں پختونوں کا کردار نا قابل
فراموش ہے اور آج وہاں دہشت کا راج ہے جس سے ملک اور قوم کو نقصان کا سامنا کرنا پڑ
رہا ہے ‘ انہوں نے کہا کہ کراچی میں امن صرف اس صورت میں قائم ہوسکتا ہے کہ کراچی
کو ہر قسم کے اسلحے سے پاک کیا جائے اور بھتہ خوروں ‘ ٹارگٹ کلرز ‘ لینڈ و ڈرگ
مافیا کے خلاف بلا امتیاز کارروائی کی جائے ‘جس طرح اے این پی حکومت نے سوات میں
آپریشن کے بعد امن قائم کیا اس طرح کراچی میں بھی آپریشن کیا جائے ‘ انہوں نے کہا
کہ اے این پی واحد سیاسی جماعت ہے جس نے اپنے قائد اسفندیار ولی خان کی قیادت میں
نامساعد حالات کے باوجود اپنے انتخابی منشور پر 80فی صد عمل کردکھایا ہے اور اب
صوبے میں امن اور رترقی کےلئے جامع حکمت عملی ترتیب دے دی گئی ہے جس پر عملدرآمد سے
دور رس نتائج مرتب ہونگے ‘ انہوں نے کہا کہ اس مرتبہ ریکارڈ رکنیت سازی سے یہ بات
ثابت ہوگئی ہے کہ عوام کو پارٹی پالیسیوں پر مکمل اعتماد ہے ‘ انہوں نے دونوں
تنظیموں کو ہدایت کی کہ اپنے اپنے علاقے میں ترقیاتی منصوبوں کی نگرانی کریں اور
کسی بھی صورت کام کے معیار پر سمجھوتہ نہ کیا جائے ۔
جاری کردہ
مرکزی میڈیا سیل
باچاخانؒ مرکز پشاور