مورخہ 25 اپریل 2011ء بروز پیر
پریس ریلیز

پشاور (پ ر) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری تاج الدین خان نے گزشتہ دو
تین دن کے دوران عوامی نیشنل پارٹی کے قائد جناب اسفندیار ولی خان صاحب کے خلاف بعض
غیر ذمہ دار سیاسی عناصر کی طرف سے منفی بیان بازی کو بلاجواز قرار دیتے ہوئے اسے
بند کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔
اپنے ایک اخباری بیان میں عوامی نیشنل پارٹی خیبر پختون خوا کے جنرل سیکرٹری نے اس
بات کی سختی سے تردید کی کہ اے این پی کے مرکزی صدر صاحب نے ناموس رسالت کے قانون
میں ترمیم کا ذکر کیا ہے۔ درحقیقت اُنہوں نے صرف اتنا کہا تھا کہ وہ کسی بھی قانون
کے غلط استعمال کے حق میں نہیں ہیں۔ اب بھلا بتایا جائے کہ اُنہوں نے کون سی غلط
بات کہی ہے چونکہ پاکستان کے خلاف مذہبی جنونیوں کا ملک ہونے اور مذہبی اقلیتوں پر
ظلم و ستم ہونے کا پروپیگنڈہ دنیا بھر میں جاری ہے اس لئے ملک کے ایک بڑے ذمہ دار
سیاستدان کے طور پر جناب اسفندیار ولی خان صاحب ملک کے امیج کو بہتر بنانا اپنا فرض
سمجھتے ہیں۔ جو سیاسی پارٹیاں اے این پی کے رہنما کے خلاف غل غپاڑہ مچا رہی ہیں ان
کا اپنا ماضی گھناﺅنا‘ حال مایوس کن اور مستقبل تاریک ہے۔ گزشتہ عام انتخابات میں
عوام کی جانب سے مسترد کئے جانے کے بعد سے وہ اپنے زخم چاٹ رہے ہیں اور اے این پی
کے قائد کے خلاف بیان بازی کر کے اپنا سیاسی قدو کاٹھ بڑھانے کی کوششوں میں مصروف
ہیں۔ ہم ان سیاسی پارٹیوں کو خبردار کرنا چاہتے ہیں کہ اگر اُنہوں نے یہ مہم جوئی
جاری رکھی تو ہمیں حق حاصل ہو گا کہ ہم ان نام نہاد سیاسی قیادتوں کا پول کھول دیں۔

جاری کردہ

تاج الدین خان
صوبائی جنرل سیکرٹری اے این پی
خیبر پختون خوا