ہفتہ 29اکتوبر 2011ء
پشا ور ( پ ر )پختون سٹوڈنٹس فیڈریشن فیڈرل اردو یونیورسٹی اسلام آباد کے زیر
اہتمام شکرپڑیاں اوپن ائر تھیٹر میں گرینڈ پختون نائٹ کا انعقاد کیا گیا اس موقع پر
پختون ایس ایف اسلا م آباد ڈویژن کے صدر حمید محسود کی زیر صدارت ڈویژنل کابینہ کے
ارکان نے اپنے عہدوں کا حلف بھی اٹھایا ‘ جس کے بعد میوزیکل شو کا اہتمام کیا گیا ‘
تقریب میں عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی ایڈیشنل سیکرٹری جنرل ہاشم بابر ‘ پختون ایس
ایف کے ایڈوائزر ارباب محمد طاہر خان خلیل ‘ عوامی نیشنل پارٹی کی سنٹر ل ورکنگ
کمیٹی کے رکن نوابزادہ محسن علی خان ‘ پختون ایس ایف کے مرکزی صدر بشیر شیر پاﺅ اور
دیگر عہدیداروںسمیت ہزاروں طلباءنے شرکت کی ‘ تقریب سے اپنے خطا ب میں عوامی نیشنل
پارٹی کے مرکزی ایڈیشنل سیکرٹری جنرل ہاشم بابر ‘ پختون ایس ایف کے ایڈوائزر ارباب
محمد طاہرخان خلیل ‘ نوابزادہ محسن علی خان اور پختون ایس ایف کے مرکزی صدر بشیر
شیر پاﺅ نے کہا کہ اسلام آباد میں پختون ایس ایف کے زیر اہتمام تقریب میں ہزاروں
طلباءکی شرکت اس بات کا ثبوت ہے کہ نئی نسل کو پختون ایس ایف او رعوامی نیشنل پارٹی
کی پالیسیوںپر اعتماد ہے اور وہ روشن مستقبل ‘ ترقی و خوشحالی اور اپنی سر زمین پر
قیام امن کے لئے پارٹی قائد اسفندیار ولی خان کی قیادت میں متحد ہیں ‘ انہوں نے کہا
کہ تقریب میں طلباءکی کثیر تعداد میں شرکت سے ہمار ے حوصلے بھی بڑھے ہیں ‘ پختون
سٹوڈنٹس فیڈریشن نے ہمیشہ پر امن اور اسلحہ کلچر سے پاک تعلیمی ماحول کو یقینی
بنانے کے لئے قربانیاں دی ہیں ‘ تنظیم طلباءکے ہاتھوںمیں کلاشنکوف اور پستول کی جگہ
قلم اور کتاب دینے کے لئے کوشاں ہے اورپارٹی نے طلباءو لیکچررز کی فلاح و
بہبودکےلئے جو جدوجہد کی ہے وہ تاریخ کا ایک سنہر ا باب ہے ‘ انہوں نے کہا کہ نئی
نسل کو اپنے اسلاف کی قربانیوں اور کارناموں سے آگاہ کرنے کےلئے تعلیمی نصاب میں
جنگ آزاد ی اور پختون قومی تحریک کے رہنماﺅں اورکارکنوںسے متعلق مواد شامل کیا جائے
گا ‘18ویں ترمیم کے بعد اب صوبے کو اپنے وسائل اپنی نئی نسل کی ترقی کےلئے خرچ کرنے
کا پورا اختیار مل چکا ہے اور اس اختیار کو طلباءو لیکچررز کی فلاح وبہبود کے لئے
استعمال کیا جائے گا ‘ انہوں نے کہاکہ تمام مسائل کا حل جمہوریت ‘ پارلیمنٹ اور
دیگر آئینی اداروں کی مضبوطی میں پنہاں ہے ‘ جس کےلئے عوامی نیشنل پارٹی شروع دن سے
ہی اپنے جدوجہد جاری رکھے ہوئے ہیں جو عوام کی ترقی اور خوشحالی کی منزل حاصل کرنے
تک جاری رہے گی ‘ ماضی میں جمہوریت کو پنپنے نہیں دیا گیا جس سے مسائل میں اضافہ ہو
ا لیکن آج خطے اور عالمی سطح پر حالات بدل چکے ہیں انہوں نے کہا کہ بدلتے ہوئے
حالات میں سیاسی جماعتوں پر بھاری ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ خطے اور اپنی سر
زمین کو درپیش مسائل کے حل کےلئے متفقہ لائحہ عمل ترتیب دیں اور پارلیمنٹ کے ذریعے
تمام مسائل کے حل کےلئے کوششیں کریں ‘ انہوں نے کہا کہ غیر جمہوری قوتوں کا راستہ
مسدود کر نے کے لئے جس طرح سیاسی جماعتوں نے مل کر پارلیمنٹ سے 18ویں ترمیم منظور
کرائی اسی طرح کے دیگر اقدامات بھی وقت کا تقاضا ہیں ۔
جاری کردہ
مرکزی میڈیا سیل
باچا خانؒ مرکز پشاور