Respected Journalists
We are not here to respond to anyone; neither do we want to respond to any individual. The purpose rather is to appraise our party’s own rank and file about the true state of affairs in issues that relates to ANP which were discussed in recent days and to help remove any confusions.
That has eventually happened which should never have happened. Begum Nasim Wali Khan is honorable for all of us, and owing to her stature I would like to state that she is an experienced and wise woman, but her announcement rejecting the membership drive, convening a grand jirga under her own supervision for electing office bearers, appeals for non participation in the membership drive, refusal to accept organizing committees of the Party, and her incessant convening of meetings without any organizational mandate and approval, tantamount to her disassociation with the Awami National Party. Given these facts, it’s become clear that she has dissociated herself from the party and that she has embarked on her own independent political program.  She has alleged that Asfandayar Wali Khan and Amir Haider Hoti have ruined the party, she inevitably clubbed Azam Hoti’s name with them to give some credence to her assertions, but in the same breath supported the allegations of Azam Hoti. She has stated that these persons have no role and place in the party. It just doesn’t stand to reason. Ironically, she also announced her intention to restructure and reorganize the party herself.  In other words, she has practically announced her disassociation with the party; which is sad indeed.
It is pertinent to mention that the procedure adopted by the ANP for membership drive and reorganization process is not new; it is rather a continuation and replication of the processes and procedures which are in practice in the party since the times of Bacha Khan and Khan Abdul Wali Khan.
In this process, membership drive is initially launched, then basic units or Branches are formed, followed by an election process for the creation of whole structure of cabinets and Bodies at Tapa, District, Province and Central levels as defined and envisioned in the constitution. Begum Nasim herself  adopted the same procedure throughout her tenure. No one other than Begum Nasim better understand this process and procedure adopted by the ANP since the days of Bacha Khan and Wali Khan.
It is important to note that the decision of the premature dissolution of all cabinets and structures of the party and going to membership drive and elections afresh was made in the context of ANP’s poor performance in the general elections held in the country, despite our reservations about the election process.
Resultantly, Asfandyar Wali Khan convened a meeting of the party’s consultative committee, think tank, and thereafter meeting of the central council and the processes now adopted by the ANP are taking place in light of the decisions that were taken by those competent forums of the party.
It is interesting that in all those important meetings Azam Hoti always took the stance that ANP couldn’t be better organized and managed without the leadership of Asfandyar Wali Khan and would argue that Asfandyar Wali Khan is true political successor to Bacha Khan and Wali Khan and that Asfandyar Wali and ANP are inseparable. In course of those meetings, a fact finding committee was constituted by Asfandayar Wali Khan, and in the light of the report and recommendations of the said committee Asfandyar Wali Khan took the unprecedented and revolutionary step of dissolving all structures and cabinets of the party.
All of a sudden, Azam Hoti’s views changed drastically and demanded that Asfandyar Wali Khan should distance himself from the party’s affairs,  yet stressed to keep the leadership within Wali Bagh. It wasn’t a political issue at all. Had it been so, it would have come to fore during the course of those fateful meetings of the central committee held immediately after the elections.
It was an effort to give political shape to a family vendetta, which has been effectively explained by  Amir Haider Hoti. It was during this period that Begum Nasim broke her long term silence and reiterated Azam Hoti’s demand that  Asfandyar Wali Khan has no place in the party. Given this background, it is fairly clear that this is a family dispute, certainly not a political one and all these efforts are being made to try and give it a political shape. Every family has its own issues which are normally resolved within the family. It is  certainly not an appropriate approach to agitate such issues in pubic through media in a bid to create a facade of political disputes and differences. It is clear that Begum Nasim stood by her brother while Haider Hoti inevitably took a position for his own mother. Haider Hoti has always considered Asfandyar Wali Khan his leader and mentor and he is currently an effective MNA of ANP in the National Assembly, while Asfandyar Wali Khan is the leader and mentor of the party. ANP is absolutely united under his leadership and the party believes and considers him as the only true successor of the political legacy of Bacha Khan and Wali Khan. Allegations hurled at our leader Asfandyar Wali Khan are ridiculously absurd and if anyone believes that by levelling such allegations they can damage the persona and political role of Asfandyar Wali Khan, only lives in a fool’s paradise. ANP stands firmly with Asfandyar Wali Khan.
All party workers are advised to hold party’s efficiency supreme above all else and participate vigorously in the membership drive, conform strictly to party discipline, and manage party affairs according to the constitution and instructions of the party’s leadership.
 

آج کی یہ پریس کانفرنس کسی کو جواب دینے کیلئے منعقد نہیں ہو رہی ۔ اور نہ ہم کسی کو جواب دینا چاہتے ہیں۔ مگر جن باتوں کا اے این پی سے تعلق ہے ، اور جس کا ذکر گزشتہ دنوں میں ذکر کیا گیا ہے ، اس حوالے سے پارٹی ورکروں کو صحیح صورت حال سے آگاہ کرنا مقصود ہے اور جو ابہام پیدا کرنے کی کوشش کی گئی ہے اس کو دور کیا جا سکے ۔
آخر وہی ہوا جو کسی طور نہیں ہونا چاہئے تھا بیگم نسیم ولی خان ہمارے لئے نہایت قابل احترام ہے اور ان کی احترام کو ملحوظ حاطر رکھتے ہوئے کہنا چاہیں گے ، کہ محترمہ بی بی صاحبہ خود ایک تجربہ کار اور سمجھ دار شخصیت ہے ، ان کی طرف سے یہ اعلان کرنا کہ پارٹی رکنیت سازی کو مسترد کرتے ہیں اور تمام اضلاع کے نمائندوں اور کارکنوں کا ایک گرینڈ جرگہ خود بی بی صاحبہ کے زیر نگرانی بلایا جائے گا جس میں عہدیداروں کا انتخاب کیا جائے گا ۔ یعنی رکنیت سازی سے انکار ممبرشپ میں حصہ نہ لینے کی اپیل ، اور خود گرینڈ جرگہ بلانے کا اعلان اور پارٹی کے آرگنائزنگ کمیٹیاں ماننے سے انکار ، اور تسلسل سے بغیر کسی تنظیمی اور ادارے کے ازخود اجلاس بلانا ، ان تمام حقائق کو مدنظررکھ کر بی بی صاحبہ نے عملی طور پر ازخود عوامی نیشنل پارٹی سے لاتعلقی کا اعلان کر دیا ۔ اس لئے پارٹی ڈسپلن سے لاتعلق ہوکر الگ تھلگ پروگرام پر عمل پیرا ہے ۔ جبکہ انہوں نے اسفندیارولی خان ، حیدر ہوتی اور اس میں حقیقت کا رنگ بھرنے کیلئے بادل ناخواستہ اعظم ہوتی پر الزام لگایا کہ انہوں نے پارٹی کو تباہ کیا ہے ، لہٰذا پارٹی میں ان کیلئے کوئی جگہ نہیں ۔ جبکہ اس کے ساتھ ساتھ اعظم ہوتی کی کئی باتوں کی تائید بھی کی ، جوایک کھلا تضاد ہے ، اور اس پر ستم ظریفی یہ ہے کہ پارٹی کو بی بی ازخود ازسرنو تشکیل دے گی اور اس کو دوبارہ فعال کرے گی ، لہٰذا ایک دفعہ افسوس کے ساتھ کہنا پڑتا ہے کہ محترمہ بیگم نسیم ولی خان صاحبہ نے ازخود اے این پی کو خیرباد کہا اور عملی طور پر اے این پی چھوڑنے کا اعلان کیا ۔ سب سے پہلے یہ بتانا اشد ضروری ہے کہ عوامی نیشنل پارٹی نے جو موجودہ ممبرسازی مہم اور تنظیم سازی کا جو سلسلہ شروع کر رکھا ہے یہ کوئی نئی بات نہیں ، یہی طریقہ کار فخرِ افغان باچاخانؒ اور رہبر تحریک خان عبدالولی خان کے دور سے چلا آرہا ہے ، یعنی پہلے پارٹی ممبرشپ کی جاتی ہے پھر بنیادی یونٹ بنائی جاتی ہے اور پھر اس میں انتخاب کے ذریعے تنظیم تشکیل دی جاتی ہے ، اور اسی طرح تپہ جات ، اضلاع ، صوبے اور پھر مرکز آئین میں مروجہ طریقہ کار کے مطابق تنظیمیں تشکیل دی جاتی ہیں ۔ اور یہی طریقہ کارمحترمہ بیگم نسیم ولی خان صاحبہ نے بھی اپنے دور صدارت میں اپنایا تھا ، بھلا ان سے زیادہ کون بہتر جانتا ہے کہ اے این پی نے آج جو طریقہ کار آپنایا ہے یہ وہی پرانا باچاخانؒ اور ولی خان اور تسلسل سے اے این پی پلیٹ فارم سے جاری و ساری ایک عمل ہے ۔یہ امر قابل ذکر ہے کہ موجودہ پارٹی میں قبل ازوقت ممبرسازی اور انتخابات کا فیصلہ اس لئے کیا گیا جب عام انتخابات اس ملک میں منعقد ہوئے تو اس کا مایوس کن نتیجہ آیا ، جس پر اے این پی کے بہت سارے تحفظات ہیں ۔ اس کے نتیجے میں اسفندیارولی خان نے فوری طور پر اے این پی کی مشاورتی کمیٹی یعنی (تھنک ٹینک) کا اجلاس بلایا اور اس کے فوراً بعد اے این پی کے مرکزی مجلس عاملہ کا اجلاس بلایا اور یہ سارا عمل آج مرکزی مجلس عاملہ کے فیصلوں کی روشنی میں جاری ہے ۔
یہ امر بھی قابل ذکر ہے کہ اعظم ہوتی نے اجلاس میں اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اسفندیارولی خان کی قیادت کے بغیر عوامی نیشنل پارٹی کو منظم اور فعال رکھنا ممکن نہیں کیونکہ وہ باچاخانؒ اور ولی خان کے سیاسی وارث ہیں اور اے این پی اور اسفندیار ولی خان لازم و ملزوم ہیں ۔ اس

کے بعد فیکٹ فائنڈنگ کمیٹی بنائی گئی اور اس کے رپورٹ کے نتیجے میں اسفندیارولی خان نے تمام تنظیمیں بشمول مرکزی تنظیمیں توڑ ڈالی ۔ جو ایک
انقلابی اقدام ہے مگر نہ جانے کیا ہوا کہ اعظم خان کے خیالات یکسر بدل گئے اور ان کی طرف سے ایک مطالبہ کیا گیا کہ اسفندیارولی خان پارٹی سے الگ ہوجائے اور پھر یہ بھی ساتھ کہا کہ قیادت ولی باغ ہی میں ہونی چاہئے ۔ چونکہ یہ سیاسی اختلاف نہیں تھا اگر ہوتا تو سنٹرل کمیٹی میں اس کا اظہار ضرور کرتے ۔ چونکہ وہ ایک گھریلو اور ذاتی اختلاف کو سیاسی رنگ دینے کی کوشش کی گئی جس کی امیر حیدر خان ہوتی نے بڑے اچھے طریقے سے وضاحت کی ہے ۔ مگر بہت عرصے تک خاموش رہنے والی بیگم نسیم ولی خان صاحبہ نے چپ کا روزہ توڑتے ہوئے تقریباً وہی مطالبہ دہرایا کہ اسفندیارولی خان کیلئے پارٹی میں کوئی کنجائش نہیں ۔ لہٰذا اس تمام پس منظر کو دیکھتے ہوئے یہ سمجھنا مشکل نہیں ہے کہ یہ سیاسی اختلاف نہیں بلکہ ایک گھریلو اختلاف ہے جس کو سیاسی رنگ دینے کی بھرپور کوشش کی جارہی ہے ۔ گھریلو اختلاف ہر گھر میں ہوتے ہیں ، مگر اس کو گھریلو طریقہ کار کے مطابق حل کئے جاتے ہیں ۔ مگر اس کو سیاسی رنگ دیکر میڈیا کے ذریعے اچھالنا مناسب رویہ نہیں ہے ۔ گھریلو اختلاف کے حوالے سے ہم تو کچھ نہیں کہ سکتے مگر یہ واضح ہے کہ اس اختلاف میں بیگم نسیم ولی خان صاحبہ اعظم ہوتی کا ساتھ اور حیدر ہوتی نے اپنی ماں کا ساتھ دیا اور حیدر ہوتی صاحب پہلے بھی اسفندیارولی خان کو سیاسی قائد مانتے تھے اور آج بھی مانتے ہیں اور اے این پی کے فعال ایم این اے ہیں۔ جبکہ اسفندیارولی خان عوامی نیشنل پارٹی کے قائد ہے اس کی سربراہی میں اے این پی متحد اور متفق ہے ان کو باچاخانؒ اور ولی خان کی سیاست کا وارث اور تسلسل سمجھتے ہیں ۔ لہٰذا اے این پی اور اسفندیارولی خان لازم و ملزوم ہیں ان کو اے این پی سے کسی طور الگ نہیں کیا جاسکتا۔ اسفندیارولی خان پر لگائے گئے الزامات بالکل بے بنیاد اور من گھڑت ہیں، اور اگر کوئی یہ سمجھتا ہے کہ ان الزامات سے ان کی شخصیت اور قائدانہ کردار کو نقصان پہنچاسکے گا تو یہ ان کی خام خیالی ہے۔ تمام پارٹی اسکے ساتھ سیسہ پلائی ہوئی دیوار کی طرح کھڑی ہے ۔
تمام پارٹی ورکرز سے اپیل کی جاتی ہے کہ وہ پارٹی فعالیت کو مقدم سمجھیں اور ممبرسازی مہم میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیں ، اور ڈسپلن پر سختی سے کاربند رہتے ہوئے پارٹی معاملات کو آئین اور پارٹی قیادت کے احکامات کے روشنی میں چلائیں۔