Peshawar: Awami National Party Peshawar finalized arrangements for the anti-Kala Bagh Dam public meeting to be held here in Nishtar Hall on Saturday, December. 8.
A press release issued from Baacha Khan Markaz Peshawar said arrangements for the public meeting came under discussion during a meeting chaired by the ANP Pakhtunkhwa president Senator Afrasiab Khattak.
On the occasion, all the party lawmakers including the ministers were directed to lead the party activists from their respective constituencies to reach Nishtar Hall from the grand meeting.
Senator Afrasiab Khattak urged the party leaders to utilize their best possible efforts to mobilize the public as the ANP Chief Asfandyar Wali Khan would also be addressing the audience.
He said construction of the Kala Bagh Dam was a disputed issue and three federating units had rejected it. He pointed out that raking up contentious issues like the Kala Bagh Dam could impact the national solidarity as the reservoir was not in the interest of Sindh, Balochistan and Khyber Pakhtunkhwa.
The senator said instead of wasting time on the Kala Bagh Dam efforts should be made to build the Basha Dam which was economical and useful.
He appealed to the Chief Justice of Pakistan to take note of the verdict of the Lahore High Court as the court ruling was causing divisions in the nation on the issue.
Senior Minister Bashir Ahmad Bilour, Minister for Sports Syed Aqil Shah, Deputy Speaker provincial Assembly Khushdil Khan, MPAs Alamgir Khan Khalil, Aurangzeb Khan, Shagufta Malik and Munawar Farman and the party’s provincial office-bearers Tajuddin Khan, Mian Said Laiq Bacha and Malik Ghulam Mustafa attended the meeting.

پشاور، عوامی نیشنل پارٹی کے زیر اہتمام 8دسمبر کو نشتر ہال میں مجوزہ اینٹی کالاباغ ڈیم جلسہ کا کامیاب بنانے کیلئے عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر سینیٹر افراسیاب خٹک کی زیر صدارت وزیر اعلیٰ اینکسی میں ایک اجلاس منعقد ہوا جس میں سینئر صوبائی وزیر بشیر احمد بلور ‘ وزیر کھیل سید عاقل شاہ ‘ ڈپٹی سپیکر صوبائی اسمبلی خوشدل خان ‘ عوامی نیشنل پارٹی کے ایڈیشنل سیکرٹری جنرل تاج الدین خان ‘ صوبائی نائب صدر سید لائق باچا ‘ صوبائی سیکرٹری انفارمیشن ملک غلام مصطفی ‘ ایم پی اے عالمگیر خلیل ‘ایم پی اے اورنگزیب خان ‘ ایم پی اے شگفتہ ملک اور ایم پی اے منور فرمان نے شرکت کی ‘ اس موقع پرعوامی نیشنل پارٹی کے تمام صوبائی وزراء اور ایم پی ایز کوہدایت کی گئی کہ وہ 8دسمبر کو اپنے اپنے حلقہ ہائے نیابت سے جلوس لے کر نشتر ہال پہنچیں اور ملی قائد اسفندیارولی خان کی آمد کے پیش نظر جلسہ کو زیادہ سے زیادہ کامیاب بنانے کیلئے اپنی توانائیوں کا بھرپور استعمال کریں ‘ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر سینیٹر افراسیاب خٹک نے کہا کہ کالا باغ ڈیم ایک متنازعہ منصوبہ ہے جسے وفاق کی تین اکائیاں متفقہ طور پر مسترد کر چکی ہیں اس لئے یہ ڈیم بنانے کی بات کرنے سے ملکی یکجہتی متاثر ہونے کا خدشہ ہے ‘ انہوں نے کہا کہ کالاباغ ڈیم نہ صرف پختونخوا بلکہ سندھ اور بلوچستان کیلئے بھی نقصان دہ ہے ‘ اس کی تعمیر کے بجائے بھاشا ڈیم کا انتخاب کیا گیا جو لاگت اور افادیت میں کالا باغ ڈیم سے زیادہ اچھا منصوبہ ہے اور یہ متنازعہ بھی نہیں ‘ انہوں نے چیف جسٹس سپریم کورٹ سے اپیل کی کہ کالاباغ ڈیم کی تعمیر کے حوالے سے لاہور لائیکورٹ کے فیصلے کا ازخود نوٹس لے اور قوم کو تقسیم کرنے والے اس فیصلے کو کالعدم قرار دے کر ملکی یکجہتی کو یقینی بنایا جائے ۔