مردان کے علاقے ہوتی میں وزیراعلی امیرحیدرخان ہوتی نے اٹھ کروڑ روپے کی لاگت سے تیار کئے جانیوالے شیرداد بابا ماندوری پلے گراونڈ کا سنگ بنیاد رکھ دیا

مردان، خیبرپختونخوا کے وزیر اعلیٰ امیرحیدر خان ہوتی نے کہا ہے کہ خدمت سیاست سے بالا تر ہو تی ہے ا پنے بزرگوں کے اس اُصول کو بنیاد بنا کر اُنہوں نے 4 سال کے دوران عوام کی بے لوث خدمت میں کوئی کمی نہیں آنے دی اور انشاءاﷲ آئندہ بھی یہ خدمت کا سفر جاری رہے گا۔ اُنہوں نے کہا کہ ماضی میں مردان کو ہمیشہ اس کے جائز حق سے محروم رکھا گیا مردان کہنے کو تو صوبے کا دوسرا بڑا شہر تھا تاہم اس کی حیثیت کسی قصبے یا دیہات کے برابر تھی ۔ مردان کے فرزند کی حیثیت سے اُنہوں نے مردان کو اس کا حق دیا تاہم ایسا کسی دوسرے ضلع یا شہر کی قیمت پر نہیں کیا ۔ ہوتی میرا آبائی علاقہ ہے اس کی ترقی اور یہاں کے عوام کو بنیا دی سہولیات کی فراہمی کے لیے کئی منصوبوں پر کام جاری ہے جس میں شیر داد بابا ماندوری پلے گراو¿نڈ کا منصوبہ بھی شامل ہے جس پرآٹھ کروڑ روپے لاگت آئے گی ۔ وہ مایا ر روڈ پر ہوتی مردان سے تعلق رکھنے والے خدائی خدمتگار شیر دادا باباماندوری کے نام سے موسوم سپورٹس گراو¿نڈ کا سنگ بنےا د رکھنے کے بعد علاقہ کے معززین کے ایک بڑے اجتماع سے خطاب کر رہے تھے جس کی صدارت حاجی ولی داد ماندوری نے کی اور اس سے اے این پی ضلع مردان کے جنرل سیکرٹری عمران ماندوری نے بھی خطاب کیا ۔
اس موقع پر اے این پی کے صوبائی سینیئر نائب صدر انجینئر عباس ، ضلعی سینئر نائب صدر جاوید محمد خیل ، سابق تحصیل ناظم احسا ن باچا ، محمد اقبال خان ہوتی ایڈوکیٹ ، جاوید یوسفزئی ، حاجی عطاءاللہ اور انتظامیہ اور پولیس کے اعلیٰ حکام بھی موجود تھے ۔ یہاں یہ قابل ذکر ہے کہ 42 کنال اراضی پر شیرداد بابا ماندوری پلے گراو¿نڈ صرف چھ مہینے کے قلیل عرصے میں مکمل ہوگا جہاں علاقے کے نوجوانوں کو مختلف کھیلوں کی سہولت میسر ہوگی ۔امیر حیدر خان ہوتی نے کہا کہ ہمیں پختونوں کی ترقی اور آزادی کے لئے خدائی خدمت گاروں کی قربانیوں اور کوششوں کو فرامو ش نہیں کر سکتے اُن کے عظیم ناموں کو زندہ و جاوید رکھنے کے لئے اجتماعی بھلائی کے منصوبوں کو اُن کے ناموں سے منسوب کیا جار ہا ہے۔اُنہوںنے کہا کہ ہوتی کا یہ پلے گراونڈ شیر داد باباکے نام سے منسوب کیا گیا ہے۔ وزیر اعلیٰ امیر حیدر خان ہوتی نے کہا کہ کچھ عرصہ قبل جب ہم نے ڈانگ بابا میں گرلز ڈگری کالج کا سنگ بنیا د رکھا تو علاقے کے لوگوں کو فکر لاحق ہوئی کہ بچوں سے کھیل کود کی سہولت چھن جائے گی اور مقامی جنازہ گا ہ کا مسئلہ ہوگا اس وقت میں نے وعدہ کیا تھا کہ نیا پلے گراو¿نڈ بھی بنے گا اور جنازہ گا ہ نہ صرف برقرار ہوگی بلکہ اس میں توسیع بھی ہوگی اور آج اللہ کے فضل سے نئے پلے گراو¿نڈ پر بھی کام شروع ہوگیا ہے اور جنازہ گا ہ کی توسیع بھی تکمیل کے قریب ہے ۔اُ نہوں نے کہا کہ مردان شہر کو سیلاب سے بچانے کے لیے کلپانی نالے کے دونوں اطراف حفاظتی پشتے تعمیر کیے جارہے ہیں اُنہوں نے سکندری سے بی بی ابئی تک حفاظتی پشتوں کے لیے 16 کروڑ روپے کے نئے منصوبے کا اعلان کیا جس پر ڈیڑھ دو مہینے کے اندر کام شروع ہوگا ۔ وزیر اعلیٰ نے کہا کہ ہوتی مردان میں قبرستانوں کے لیے سرکاری طور زمین کی خریداری کا عمل بھی جاری ہے مصری آباد میں اس مقصد کے لیے 20کنال مزید اراضی حاصل کی گئی ہے جہاں جنازہ گاہ اور چاردیواری بھی تعمیر ہوگی اور اس پر دو کروڑ روپے لاگت آئے گی اسی طرح گلی باغ میں 50 روپے کی لاگت سے 12 کنال اراضی حاصل کی جارہی ہے جبکہ ہوتی میں سنگر بابا قبرستان میںتوسیع کے لیے 40 کنال اراضی حاصل کی گئی ہے اور ہوتی کے نکاسی آب اور سڑک کے منصوبے پر بھی تیزی سے کام جاری ہے ۔ امیر حیدر خان ہوتی نے کہا کہ اللہ تعٰا لیٰ کے گھروں کی تعمیر ومرمت کاکا م بھی حسب معمول جاری رہے گا تاہم اُنہوں نے معززین علاقہ سے کہا کہ اس میں اس بات کاخیال رکھا جائے کہ ہر مسجد میں ضرورت کے مطابق کام کیا جائے ۔ اُنہوں نے کہا کہ انسانیت کی خدمت بہترین عبادت ہے اور جس جس کو موقع ملے تو اس سے ضرور فائدہ اُٹھانا چاہیے ۔ قبل ازیں امیر حیدر خان ہوتی نے شیرداد بابا ماندوری پارک ہوتی کا سنگ بنیا د رکھاا ور منصوبے کی کامیا بی سے تکمیل کے لیے دعا کی۔