اسلام آباد(نمائندہ خصوصی) عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی سیکرٹری جنرل اور پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے ترجمان میاں افتخارحسین نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت ملازم کش،غریب کش اور مزدور کش حکومت ہے، سرکاری ملازمین کے ڈی چوک دھرنے میں شامل تمام افراد بھی پاکستانی ہیں ۔آج ان لوگوں کی حکومت ہے جو کہتے تھے مہنگائی نہیں ہوگی، ملازمین کو تکلیف نہیں ہوگی۔آئی ایم ایف کی غلام حکومت نے عوام اور بالخصوص سرکاری ملازمین کو معاشی طور پر تباہ کردیا ہے۔

پارلیمنٹ ہاؤس کے سامنے سرکاری ملازمین کے احتجاج سے خطاب کرتے ہوئے میاں افتخارحسین نے کہا کہ آئی ایم ایف کے ساتھ ایسے معاہدے کئے گئے کہ عوام اور بالخصوص سرکاری ملازمین مشکلات کے شکار ہیں۔موجودہ حکومت نے پنشن، انکریمنٹ یہاں تک کہ مستقل ملازمتوں کو ختم کیا جارہا ہے۔آئی ایم ایف کے اشاروں پر عوام کا خون چوسا جارہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ قرضہ لینے پر خودکشی کرنیوالے عمران خان کیلئے وقت آگیا ہے کہ اپنے وعدے پر عمل کرے اور خودکشی کرلے۔عوام کے صبر کا پیمانہ لبریز ہوچکا ہے، آج ڈی چوک پر سرکاری ملازمین کا احتجاج حکومت کے خاتمے کا آغاز ہے۔اے این پی اور پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ سرکاری ملازمین کے مطالبات کے ساتھ کھڑی ہے۔ڈی چوک کا راستہ عمران خان نے عوام کو دکھایا، آج سرکاری ملازمین بھی ڈی چوک پہنچ چکے ہیں۔اگر حالات یہی رہے تو ملک میں انارکی پھیل جائیگی جسکے ذمہ دار موجودہ سلیکٹڈ حکمران ہوں گے۔

میاں افتخارحسین نے کہا کہ اپوزیشن اسی لئے موجودہ حکومت کے خلاف ہیں کیونکہ حالات مزید خراب کئے جارہے ہیں۔موجودہ حکومت سے چھٹکارا ہی عوامی مسائل کا واحد حل ہے۔2019ء سے سرکاری ملازمین کی تنخواہ وہی، مہنگائی میں اضافہ ہوچکا، ڈالر کی ریٹ کہاں سے کہاں پہنچ گئی۔وزیراعظم اپنی اور وزارء کی تنخواہوں میں اضافہ کرسکتا ہے لیکن سرکاری ملازمین کیلئے یہ سہولت دستیاب ہی نہیں۔اپوزیشن انہی حقائق کی بنیاد پر موجودہ حکومت سے چھٹکارا عوامی مسائل کا واحد حل سمجھتی ہے۔