پشاور(پ ر) زرعی یونیورسٹی میں پیش آنیوالے پرتشدد واقعے اور پختون سٹوڈنٹس فیڈریشن (پی ایس ایف) کے صدر اچک اچکزئی پر بہیمانہ تشدد بارے مصالحتی جرگہ باچاخان مرکز پشاور میں ہوا۔ حکومتی وفد نے وزیراعلیٰ کے معاون خصوصی برائے اطلاعات کامران بنگش کی سربراہی میں باچاخان مرکز پشاور کا دورہ کیا ۔ انکے ہمراہ سابق ضلعی ناظم پشاور عاصم خان بھی موجود تھے۔ اے این پی کے صوبائی سینئر نائب صدر خوشدل خان، صوبائی جنرل سیکرٹری سردارحسین بابک اور صوبائی ترجمان ثمرہارون بلور سمیت دیگر نے وفد کا استقبال کیا۔

وفد سے گفتگو کے دوران اے این پی کے صوبائی جنرل سیکرٹری سردارحسین بابک کا کہنا تھا کہ ہم باچاخان کے عدم تشدد کے فلسفے کے پیروکار ہیں، گھر آئے ہوئے جرگے کو کوئی رد نہیں کرسکتا، پارٹی و تنظیمی رہنمائوں سے بات چیت کے بعد ہی فیصلہ ہوگا۔عدم تشدد ہماری طاقت ہے، ہم ہر شکل میں تشدد کی مذمت کرتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہم نے ہر وقت میں اپنے طلباء کو صبر کا دامن نہ چھوڑنے کی صرف تلقین کی ہے بلکہ ہر وقت اپنے نوجوانوں کو کنٹرول بھی رکھا ہے۔

دونوں وفود نے امید ظاہر کی کہ اگلاجرگہ بھی جلد ہوگا اور رہنمائوں سے گفتگو کے بعد حتمی فیصلہ کیا جائیگا۔

واضح رہے کہ پی ٹی آئی کے طلبہ ونگ آئی ایس ایف نے زرعی یونیورسٹی میں پی ایس ایف کے صدر اچک خان اچکزئی پر بہیمانہ تشدد کیا تھا جس کے بعد وہ کئی روز تک ہسپتال میں بے ہوش اور زیرعلاج رہے تھے۔