پشاور (پ ر)عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی صدر اسفندیار ولی خان نے کہا ہے امن اور جمہوری نظام کی مضبوطی، پارلیمنٹ کی بالادستی اور آئینی لڑائی میں کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کریں گے، 12مئی 2007ء کو امن، جمہوریت، پارلیمنٹ و آئین کے دشمنوں کے خلاف لڑتے ہوئے ہمارے 50کے قریب کارکنان نے جام شہادت نوش کیا جن کی قربانیوں کو ہم سلام پیش کرتے ہیں۔

سانحہ 12مئی 2007 کی 13ویں برسی کے موقع پر ولی باغ چارسدہ سے جاری بیان میں اے این پی سربراہ کا کہنا تھا کہ 12مئی کونہتے کارکنوں کی جانیں لینے والوں کے چہرے بے نقاب ہو چکے تھے لیکن افسوس کا مقام ہے کہ آج تک ان محرکات کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کی گئی۔ آج بھی ملزمان پر فردجرم تک عائد کی گئی لیکن انہیں پھر ضمانتیں مل گئیں۔ 55ملزمان کا ضمانتوں پر رہا ہونا ایک سوالیہ نشان ہے، لیکن ہم اپنے کارکنان اور انکے لواحقین کو باور کرانا چاہتے ہیں کہ انکی قربانیاں رائیگاں نہیں جائیگی اور اس ملک میں اصل جمہوریت کے قیام تک چین سے نہیں بیٹھیں گے۔

اسفندیارولی خان نے کہا کہ معصوم جانوں کے ذریعے سیاسی ایجنڈے کی تکمیل میں مصروف وطن دشمنوں کا سیاست سے کوئی تعلق نہیں، اپنے مخصوص مفادات کے حصول کیلئے وہ کسی بھی حد تک جانے کو تیار ہوتے ہیں لیکن جب انصاف ہوجاتا ہے تو یہی لوگ بیماری کا بہانہ بنا کر عدالتوں میں پیش ہونے سے معذرت کرلیتے ہیں۔ سانحہ 12مئی کے سہولت کار اور قصوروار آج بھی عوام کا سامنا نہیں کرسکتے کیونکہ گولیوں اور ظلم سے حق کی آواز دبائی نہیں جاسکتی،اے این پی کل بھی میدان میں کھڑی تھی، جمہوریت کیلئے آج بھی کھڑی ہے،آئین و پارلیمان کی بے توقیری کرنیوالوں کو چھپنے کیلئے کہیں جگہ نہی ملے گی۔

اسفندیارولی خان نے کہا کہ اے این پی امن اور جمہوریت کیلئے جان دینے والے ہر شہید کی مقروض ہے اور انکی قربانیاں رائیگاں نہیں جانے دیں گے۔