پشاور(پ ر) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری اور خیبرپختونخوا اسمبلی میں ڈپٹی اپوزیشن لیڈر سردارحسین بابک نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت نے وبائی صورتحال میں بھی عوام کو کوئی ریلیف فراہم نہیں کی۔ اوورسیز پاکستانیوں کو لوٹنے کا سلسلہ جاری ہے اور انکی میتوں تک کو لانے کیلئے کوئی انتظام نہیں کیا جارہا۔

باچاخان مرکز پشاور میں پاکستان پیپلزپارٹی کے سابق امیدوار برائے صوبائی اسمبلی غضنفرخان کی شمولیتی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے سردارحسین بابک نے کہا کہ ائرٹکٹس کی قیمتوں میں ہوشربا اضافہ کیا گیا جو بغیر سفارش کے بھی نہیں دیے جارہے۔ اے این پی نے ہر پلیٹ فارم پر ان مسائل کو اجاگر کیا لیکن حکومت ٹس سے مس نہیں ہورہی۔ اوورسیز پاکستانیوں کو سفارتخانے اور پی آئی اے کے حکام دونوں ہاتھوں سے لوٹ رہے ہیں۔ این ایف سی ایوارڈ میں غیرمقامی شخص کی تعیناتی کے حوالے سے سردارحسین بابک نے کہا کہ اٹھارویں ترمیم کے خلاف سازشیں جاری ہیں لیکن اے این پی کسی بھی سازش کو کامیاب نہیں ہونے دے گی۔ پنجاب کے ایک شخص کو خیبرپختونخوا کا نمائندہ منتخب کیا گیا جو اس صوبے کے ساتھ زیادتی ہے۔ بجلی کا خالص منافع نہیں دیا جارہا، صوبے میں پیدا ہونیوالی گیس صوبے کے عوام کو فراہم نہیں کی جارہی جبکہ دیگر صوبوں میں اسی گیس و بجلی سے کارخانے چلائے جارہے ہیں۔

وزیرستان میں گذشتہ روز پیداہونیوالی صورتحال پر اے این پی کے صوبائی جنرل سیکرٹری نے صوبائی صدر ایمل ولی خان کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ اے این پی نے قانون کا ساتھ دیا۔ جرگے کا احترام کرتے ہیں لیکن کسی کا گھر مسمار کرنے کی اجازت ایک جرگے کو نہیں دی جاسکتی۔ کیا اسلام آباد، فیصل آباد، گجرات، گوجرانوالہ یا پشاورمیں اسی قسم کا ایک جرگہ کسی کا گھر مسمار کرنے کا فیصلہ کرسکتی ہے؟

انہوں نے کہا کہ اے این پی کے صوبائی صدر سمیت ہر کارکن قانون کی حکمرانی کے ساتھ کھڑی ہے اور وزیرستان کے معاملے پر یہ سب کچھ ثابت کردیا گیا۔