پشاور ( پ ر) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر ایمل ولی خان نے پختون سٹوڈنٹس فیڈریشن کے صوبائی صدر وسیم خٹک اور صوبائی جنرل سیکرٹری عثمان شاہ کی رکنیت دو سال کیلئے معطل کردی ہے اور پی ایس ایف کی صوبائی تنظیم بھی تحلیل کردی گئی ہے۔27جنوری کو پیش آنیوالے واقعے کے بعد دونوں عہدیداران کو شوکاز نوٹسز جاری کیے گئے تھے اور جوابات سے مطمئن نہ ہونے کے بعد یہ فیصلے کیے گئے ہیں۔ باچاخان مرکز پشاور سے جاری بیان میں دونوں عہدیداروںپرپارٹی یا کسی بھی ذیلی تنظیم کا کارکن بننے پر بھی پابندی عائد کردی گئی ہے۔دریں اثنا اس واقعے کی مکمل تحقیقات کیلئے تین رکنی کمیٹی بھی قائم کی گئی ہے جس میں اے این پی کے صوبائی نائب صدر شاہی خان شیرانی ، صوبائی سیکرٹری مالیات مختیار خان اور صوبائی جائنٹ سیکرٹری شاہ نصیر خان شامل ہے۔ یہ کمیٹی اس واقعے کی مکمل تحقیقات کرے گی اور رپورٹ صوبائی صدر کو پیش کرے گی۔اس کے ساتھ ساتھ پختون سٹوڈنٹس فیڈریشن کی صوبائی تنظیم کو تحلیل کردیا گیا ہے اور نئی الیکشن و آرگنائزنگ کمیٹی کا قیام عمل میں لایا گیا ہے جس کے مطابق جمشیدوزیر کمیٹی کے چیئرمین، سہیل اختر جنرل سیکرٹری جبکہ قاسم (مردان)،جہانزیب اجمل اور عبدالصمد(بنوں) کمیٹی کے اراکین ہوں گے۔ نئی کمیٹی انتخابات اور آرگنائزنگ کے ساتھ ساتھ تنظیمی امور کی بھی ذمہ دار ہوگی۔ اے این پی کے صوبائی صدر ایمل ولی خان کاکہنا تھا کہ آئین،تنظیم اور ڈسپلن پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائیگا۔ احترام،عزت اور تکریم ہماری روایت ہے۔ باچاخان مرکز میں انتشار یا پارٹی کے سینئر ممبران و عہدیداران کے خلاف ہتک آمیز رویے کی اجازت کسی کو بھی نہیں دی جائیگی۔