پشاور(پ ر) اے این پی کی رکن صوبائی اسمبلی ثمر ہارون بلور نے کہا ہے کہ ٹرانسپرنسی انٹرنیشنل کی رپورٹ نے تبدیلی سرکار کا چہرہ عوام کے سامنے عیاں کردیا ہے۔ کرپشن کے خاتمے کے اعلان پر حکومت میں آنے والی تبدیلی سرکار تھوک کی بنیاد پر اجتماعی کرپشن کر رہی ہے لیکن بد قسمتی سے احتسابی اداروں نے بھی چپ سادھ لی ہے۔ کرپشن کی داستانیں روز اخباروں کے زینت بنتی ہیں،عوام اور ان کے اپنے ممبران کھلے عام محفلوں میں اپنی حکومت کی کرپشن کے قصے سنارہے ہیں۔ حکومت اخلاقی جواز کھو چکی ہے اور عوام دن بدن بد ظن ہورہے ہیں۔ رکن صوبائی اسمبلی کا مزید کہنا تھا کہ جس تیزی کیساتھ حکمران جماعت کی مقبولیت گری ہے شاید پہلے کسی حکمران جماعت کا نہیں ہوئی ہوگی۔ اے این پی پر الزامات لگانے والے اب اپنی کرپشن کی داستانیں نہیں گن رہے ۔ موجودہ حکومت نے عوام کا جینا حرام کردیا ہے، مہنگائی اور بے روزگاری نے عوام کو ذہنی مریض بنادیا ہے۔ عوام کی قوت خرید جواب دے گئی ہے۔ثمر بلور کا کہنا تھا کہ ٹارگٹ کلنگ اور بھتہ خوری دن دیہاڑے ڈکیتیاں معمول بن گئی ہیں۔ نا اہل اور نالائق حکومت نے عوام کی چیخیں نکال دی ہیں۔ حکمران جماعت کا سرمایہ دار اور سرمایہ کار ٹولہ دونوں ہاتھوں سے حکومتی تعاون سے وسائل کو لوٹ رہاہے ۔ عمران خان کے دوست احباب کی پانچوں انگلیاں گھی میں پڑی ہیں۔ ملک کی تاریخ میں پہلی دفعہ اجتماعی کرپشن کی جا رہی ہے،نوجوانوں کو ورغلانے والوں نے لاکھوں نوجوانوں کو بے روزگار کردیا ہے لیکن اب بھی نیب سمیت دیگر ادارے کرپشن پر خاموشی اختیار کیے ہوئے ہیں۔