پشاور(پ ر)عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی جنرل سیکرٹری میاں افتخار حسین نے سابق مرکزی سیکرٹری مالیات ارباب طاہر کے ہمراہ ایران قونصلیٹ پشاور میں ایرانی قونصلر جنرل سید ابراہیم نہادی سے ایرانی سپریم کمانڈر جنرل سلیمانی کو نشانے بنانے کے حوالے سے تعزیت کرتے ہوئے کہا ہے کہ جنرل سلیمانی کو عراق کی سرزمین پر نشانہ بنانا ظلم و بربریت کی انتہا ہے، عوامی نیشنل پارٹی عدم تشدد پر یقین رکھتی ہے اور تشدد دنیا میں کہیں بھی جس کی طرف سے بھی ہو اے این پی اُس کی مخالف ہے، میاں افتخار حسین نے مرکزی صدر اسفندیار ولی خان اور اے این پی کی طرف سے ایرانی قوم اور حکومت ایران سے ہمدردی کا اظہار کرتے ہوئے اُن تک تعزیت کا پیغام بھی پہنچایا اور کہا کہ ایران آج تاریخی طور پر جنرل سلیمانی پر حملے اور اُس کی شہادت پر متحد ہوگیا ہے، یہ قوم پہلے ایران انقلاب کے وقت خمینی کے ہاتھوں متحد ہوگیا تھا اور آج ایران اپنے جنرل قاسم سلیمانی اور اُن کے ساتھیوں کی شہادت پر متحد ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایران کا اس نازک وقت میں متحد ہونا ایران کی اصل جیت ہے، انہوں نے خطے کی مجموعی صورتحال پر بات کرتے ہوئے کہا کہ ہمارا خطہ پہلے ہی سے جنگ زدہ ہے، افغان جنگ کی صورت میں یہ خطہ باالعموم اور پاکستان باالخصوص بہت زیادہ نقصان اُٹھا چکا ہے، خطہ اب ایک نئی جنگ کا متحمل نہیں ہوسکتا۔ انہوں نے کہا کہ تمام ملکوں کو اس صورتحال میں غیرجانبدار رہنا ہوگا، اگر کوئی اس آگ پر قابو پا نہیں سکتا تو اُس کو کسی کے ساتھ کھڑا ہونے کی بھی ضرورت نہیں ہے، میاں افتخار حسین نے اپنی بات چیت میں جنرل سلیمانی کی بیٹی کو خراج تحسین پیش کیا اور کہا کہ اُن کی تقریر کی وجہ سے پورا ایران متحد ہوا ہے اور امریکہ کو ایک واضح پیغام گیا ہے کہ ایرانی قوم امریکہ کے اس عمل کی مخالف ہے اور امریکہ کے حوالے سے ایرانیوں کے نفرت میں مزید اضافہ ہوا ہے۔ میاں افتخار حسین نے مزید کہا کہ اگر ٹرمپ کے حوالے سے اس تاثر کو دیکھا جائے کہ جنرل سلیمانی کو ٹارگٹ کرنے سے وہ الیکشن جیت جائیں گے تو یہ لوگوں کی خام خیالی ہے، یہ نفرت ٹرمپ کیلئے شکست کا سبب بن سکتی ہے، انہوں نے کہا کہ امریکہ کی یہ کوشش بھی ناکام ہوگئی ہے کہ عراق اور ایران کے تعلقات خراب کیے جائیں بلکہ مشکل کی اس گھڑی میں عراق کا ایران کے ساتھ کھڑا ہونا خوش آئند ہے۔ ایرانی قونصلر جنرل نے اے این پی قائدین کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ حکومت ایران اے این پی قائدین کی مشکور ہے کہ مشکل کی اس گھڑی میں وہ اُن کے ساتھ کھڑے ہیں۔حکومت ایران مشکور ہے کہ اس مشکل وقت میں اے این پی نے اُن کو یاد رکھا اور مشکل وقت میں یاد رکھنے والوں کو کبھی بلایا نہیں جاسکتا۔