تخت بھائی (نمائندہ شہباز)سابق وزیر اعلیٰ خیبرپختونخوا اور عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی سینئر نائب صدر امیر حیدر خان ہوتی نے کہا ہے کہ خوفناک مہنگائی اور بے روزگاری نے غریب طبقے کے مسائل میں اضافہ کردیا ہے جبکہ بدترین سماجی مسائل نے پورے معاشرے کو جکڑ لیا ہے۔ سلیکٹڈ ٹولے سے نجات کیلئے بڑی سیاسی جدوجہد کی ضرورت ہے۔ غلط پالسیوں کی بدولت عالمی اور خاصکر اسلامی دنیا میں تنہائی کا شکار پاکستان مکمل طور پر ناکام ریاست بن چکے ہیں۔ چیئرمین نیب کے پریس کانفرنس کے بعد تلاشی کے ڈر سے نیب قانون میں تبدیلی کرپشن کا واضح ثبوت ہے۔ نیب کی طرف سے حزب اختلاف کے گرفتار رہنماوں کی عدالتوں سے رہائی جعلی حکمرانوں کے منہ پر طمانچہ ہے۔ وہ جمعہ کی شام تاریخی گاؤں گوجر گڑھی میں حجرہ ناظم منصور اقبال میں ایک بڑی شمولیتی جلسے سے خطاب کررہے تھے۔ جس سے ناظم منصور اقبال صدر حاجی نور بادشاہ جنرل سیکرٹری بلال خان،ساجد یوسف زئی اور دیگر نے بھی خطاب کیا۔ اس موقع پر سابق ایم این اے حمایت اللہ مایار، چیمبر اف کامرس کے صدر حاجی اویس خان، حاجی صاحب حق، جمیل خان، ماجد خان،مرتضیٰ خان اور دیگر رہنماء بھی تھے۔ اس موقع پر سیاسی پارٹیوں کے با اثر خاندانوں عمراخان وزیر کاکا، جمعہ خان مشتاق خان درویش امان شاہ گلباچہ فضل گل خیال باچہ شاہ کمین اور دیگر سینکڑوں افراد نے اے این پی میں شمولیت کا اعلان کیا۔ امیر حیدر خان ہوتی نے کہا کہ کشکول توڑنے کے نعرے لگانے والوں نے قرضوں پے قرضے لیکر ملک کو بین الاقوامی مالیاتی اداروں کے پاس گروی رکھ دیا ہے۔ جعلی حکمران اور اس کولانے والے جنات لاکھ کوشیش کریں ملک و قوم کی حالت میں بہتری نہیں لاسکتے ہیں اور عالمی سطح پراعتماد کی بحالی بھی ناممکن ہے۔انھوں نے کہا کہ ہمارے دور میں دہشت گردی کے باوجود خزانہ بھرا ہوا تھا اور چاروں طرف ترقیاتی اور تعمیراتی کاموں کیلئے مزدور نہیں ملتے تھے اب نئے پاکستان میں غلط پالیسیوں کی وجہ سے مہنگائی اور طویل بے روزگاری نے نت نئے گھمبیر سماجی مسائل پیدا کردیئے۔ مہنگائی سے نہ صرف عام خریدار بلکہ تاجر طبقہ کاروبار چھوڑنے پر مجبور ہیں۔ انھوں نے نئے شامل ہونے والوں کو سرخ ٹوپیاں پہناتے ہوئے مبارک باد دی اور اس بارے کوششیں کرنے والے کارکنوں کا شکریہ ادا کیا۔