پشاور( پ ر)عبدالولی خان یونیورسٹی مردان میں ملازمین کی برخاستگی کے خلاف اے این پیکے اراکین اسمبلی کی پیش کردہ قرارداد خیبرپختونخوا اسمبلی نے متفقہ طور پر منظور کرلیا۔تین جنوری 2020ء کو اراکین صوبائی اسمبلی وقاراحمد خان، شگفتہ ملک، صلاح الدین ،لائق محمد خان کی جانب سے پیش کردہ قرارداد میں کہا گیا تھاکہ عبدالولی خان یونیورسٹی مردان کے 274 ملازمین کو بیک جنبش قلم برخاست کردیا گیا، ان ملازمین میں ایسے بھی ہیں جو پانچ تا سات سال یعنی 2014ء اور 2012-13 سے اسی یونیورسٹی میں کنٹریکٹ پر کام کررہے تھے۔ قرارداد کے مطابق ان میں سے 11ریگولر ملازمین ایسے بھی شامل ہیں جنہوں نے ہائی پوسٹوں کیلئے درخواست دی تھی اور انہیں باقاعدہ مشتہر کی گئی پوسٹوں پر تعینات کیا گیا تھا۔ ان ملازمین نے باقاعدہ 20مہینے ریگولر بنیادوں پر یونیورسٹی میں کام کیا تھا بعد ازاں ان کو 26ویں سنڈیکیٹ میں غیرقانونی طور پر نوکری سے نکال دیا گیا۔ قرارداد کے ذریعے اسمبلی سے پرزور سفارش کی گئی تھی کہ ملازمین پہلے کنٹریکٹ پر کام کررہے تھے اور بعد میں 48ایڈورٹائزمنٹ میں اپنے ا نہی پوسٹس پر ریگولر ہوئے نیز جو ملازمین پہلے سے اپنے پوسٹوں پر کام کررہے تھے ان کو اپنے عہدوں پر بحال کرکے ان کو overage ہونے سے بچاکر معاشی قتل سے بچایا جائے۔ مزید یہ کہ 75ریگولر ملازمین جو اپ گریڈ ہونے تھے انکو بھی بحال کرکے انکی دادر سی کی جائے۔