پشاور( پ ر)آپریشن ضرب عضب کے متاثرین کے نقصانات ازالہ کے حوالے سے اے این پی نے خیبرپختونخوا اسمبلی میں تحریک التواء جمع کرادی۔ اے این پی کے پارلیمانی لیڈر اور خیبرپختونخوا اسمبلی کے ڈپٹی اپوزیشن لیڈر سردارحسین بابک کی جانب سے جمع کرائی گئی تحریک التواء میں استدعا کی گئی ہے کہ معمول کی کارروائی روک کر اس اہم مسئلے پر بحث کی اجازت دی جائے۔ متن کے مطابق سال 2014ء میں شمالی وزیرستان میرانشاہ میں آپریشن ضرب ع کے دوران وہاں کے باشندوں کا کافی مالی و جانی نقصان ہوا تھا جس میں پورا میرانشاہ بازار مسمار کیا گیا۔ جب میرانشاہ بازار کو دوبارہ تعمیر کیا جانے لگا تو اہل علاقہ نے پشاور ہائیکورٹ میں رٹ دائر کی کہ جن لوگوں کا نقصان ہوا ہے ان کا ازالہ کا جائے۔ تحریک التواء میں کہا گیا ہے کہ ہائیکورٹ کے احکامات کی روشنی میں ٹی او آر پر دستخط کیے گئے اور ایک ایگزیکٹیو کمیٹی بھی بنائی گئی۔ اس وقت ڈپٹی کمشنر اور دیگر انتظامیہ نے متاثرہ زمینوں کے مالکان کو زمین کی قیمت 45لاکھ روپے فی مرلہ دیااور دکانوں کی دوبارہ مکمل تعمیر کا وعدہ بھی کیا گیا لیکن اب مذکورہ فیصلے سے روگردانی کی گئی ہے اور 45لاکھ کی بجائے 15لاکھ روپے مقرر کردیے گئے ہیں۔ دکان کی تعمیر کیلئے تین لاکھ روپے مختص کیے گئے ہیں جو سراسر ناانصافی اور ظلم ہے۔ اسی وجہ سے اہل علاقہ میں سخت بے چینی بڑھ گئی ہے۔ اہل علاقہ نے جلوس اور مظاہرے بھی شروع کیے ہیں۔ تحریک التواء میں حکومت سے استدعا کی گئی ہے کہ مذکورہ مسئلے کیلئے جلدازجلد اور ہنگامی بنیادوں پر اقدامات کی ضرورت ہے تاکہ مزید ظلم نہ ہو۔