پشاور ( پ ر)عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر ایمل ولی خان نے کہا ہے کہ تبدیلی سرکار نے نئے سال کے ابتداء کے ساتھ ہی عوام پر پٹرول بم گرادیا ہے جو عوام کیلئے سلیکٹڈ حکمرانوں کی جانب سے نئے سال کا تحفہ ہے۔ عوامی نیشنل پارٹی اس اضافے کو مسترد کرتے ہوئے مطالبہ کرتی ہے کہ فی الفوریہ فیصلہ واپس لیا جائے، عوام کی حالت بد سے بد تر ہوتی جارہی ہے لیکن تبدیلی سرکار کے پاس عوام پر مہنگائی کا بوجھ مزید بڑھانے کے علاوہ کوئی پالیسی نہیں۔ باچاخان مرکز سے جاری بیان میں اے این پی کے صوبائی صدر نے کہا ہے کہ 2020ء کو تبدیلی کا سال قرار دینے والے حکمرانوں کا ظلم نئے سال کے پہلے ہی دن سے بڑھنا شروع ہوگیا ہے، کرپش کرپشن کے نعروں پر لوگوں کو ٹرخایا گیالیکن مہنگائی میں روز بروز اضافہ ہورہا ہے، اب کوئی ان سے پوچھے کہ اب ان پیسوں سے کن کی جیبیں گرم ہورہی ہیں؟ پی ٹی آئی کا دماغ قرار پانے والا شخص بھی آج کل کہیں نظر نہیں آرہا، وہ معاشی فلاسفر اپوزیشن میں تھا تو پٹرول کو 44روپے فی لٹر کرنے کا مطالبہ کررہا تھا، اب خود کی حکومت میں قیمتیں 116روپے فی لٹر سے تجاوز کرچکی ہے۔ اپوزیشن میں رہتے ہوئے بڑے بڑے دعووں کی قلعی ایک سال کے اندر ہی کھل چکی ہے کہ یہ نااہل حکمران ملک کو مزید معاشی طور پر برباد کرکے ہی چھوڑیں گے۔ انہوں نے کہا کہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں حالیہ اضافے سے معاشی بدحالی میں مزید اضافہ ہوگا، حکمرانوں کو عوام کی کوئی فکر نہیں بلکہ عوام کے خون پسینے کو نچوڑ کر اسکی کمائی سے کسی اور کی جھولی بھری جارہی ہے۔