پشاور( پ ر) عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی صدر اسفندیارولی خان نے کوئٹہ کے علاقہ سٹیلائیٹ ٹائون غوث آباد کے مسجد میں دہشتگردی کے واقعے کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ مسجد میں معصوم نمازیوں کو ہدف بنانا اور قتل انسانیت سوز عمل ہے، دہشتگرد پولیس سمیت دیگر آسان اہداف کو نشانہ بنارہی ہے لیکن بدقسمتی سے بلوچستان میں بالخصوص اور پورے ملک میں بالعموم دہشتگردی کا عفریت ایک بار پھر سر اٹھارہا ہے جو ایک انتہائی خطرناک اور تشویشناک امر ہے۔ اے این پی سربراہ نے کہا کہ اس دھرتی پر اتنا تشدد اور اتنی دہشتگردی ہوچکی ہے کہمذمت کرنا بھی کم پڑرہا ہے، لیکن دشمن دہشتگرد کے سامنے ہار نہیں مانیں گے۔ بلوچستان میں گذشتہ 72گھنٹوں کے دوران دہشتگردی کا دوسرا واقعہ خوفناک کل کی تصویر پیش کررہی ہے۔ حکومت اور قانون نافذ کرنیوالے ادارے عوام کی تحفظ کو یقینی بناتے ہوئے نیشنل ایکشن پلان پر من و عن عملدرآمد یقینی بنائے۔قانون نافذ کرنیوالے ادارے دہشتگردوں کو دوبارہ سر اٹھانے کا موقع نہ دے ، ملک مزید کسی بھی غیرمستحکم حالات کامتحمل نہیں ہوسکتا۔ انہوں نے ڈی ایس پی امان اللہ کی شہادت پر بھی افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ انکی شہادت پولیس فورس کی قربانیوں کا تسلسل ہے جنکے بیٹے کو بھی ایک ماہ قبل شہید کیا گیا تھا۔ بلوچستان میں حالات خرابی کی جانب لے جانے کی مذموم کوشش دکھائی دے رہی ہے جسے ہر صورت ناکام بنانا ہوگا ۔انہوں نے تمام لواحقین سے تعزیت کرتے ہوئے کہا کہ اے این پی غم کی اس گھڑی میں ان کے ساتھ کھڑی ہے اور اللہ تعالیٰ زخمیوں کو جلد صحتیابی عطا کریں۔