پشاور(پ ر) عوامی نیشنل پارٹی کی صوبائی ترجمان ثمرہارون بلور نے کہا ہے کہ صوبے کے سب سے بڑے ہسپتال کا انتظام کمپیوٹر آپریٹر کے حوالے کرنا افسوسناک ہے،ایک نان ڈاکٹر کو صوبے کے سب سے بڑے ہسپتال کا ڈائریکٹر بنادیا گیا ہے۔اب نان ڈاکٹر کی چھٹی پر ایک کمپیوٹر آپریٹر کو پورے ہسپتال کا قائم مقام ڈائریکٹربنانا شرمناک ہے۔

اے این پی کی صوبائی ترجمان کی سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر وزیر صحت کو جواب دیتے ہوئے کہا کہ بلال نامی آئی ٹی کے بندے کو 2لاکھ روپے کے الائونس دے کر سیکرٹری بورڈ آف گورنرز بنایا گیا۔ایک مستقل ڈائریکٹر ڈاکٹر خالد مسعود کو زبردستی استعفیٰ دینے پر مجبور کیا گیا۔چھ مہینے گزرجانے کے باوجود ایل آر ایچ میں مستقل ڈائریکٹر کی تعیناتی نہیں کی گئی۔

ثمرہارون بلور نے کہا کہ امریکا میں بیٹھ کر عمران خان کزن ڈاکٹر نوشیروان برکی صوبے کے صحت کا نظام چلا رہا ہے۔اگر وہ عمران خان کا کزن نہ ہوتا تو کرونا وبا کے دوران انکی غیرموجودگی اس کرسی سے ہٹانے کیلئے کافی تھا۔خیبرپختونخوامیں ایم ٹی آئی ایکٹ کی ناکامی کے بعد پورے پاکستان میں آرڈیننس کے ذریعے یہ قانون نافذ کیا جارہا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ڈاکٹرز سمیت تمام سٹیک ہولڈرز اس قانون کے خلاف ہیں لیکن پی ٹی آئی کے وزراء دفاع کررہے ہیں۔صحت کارڈ کا راگ الاپنے والے بتاسکتے ہیں کہ او پی ڈی کی سہولت کیوں نہیں دی جارہی؟