پشاور(پ ر) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر ایمل ولی خان نے ضلع کرک میں مندر پر حملہ آور ہونا اور وزیرستان میں مشتعل عوام کا گھروں کو مسمار کرنا اور جلانا لاقانونیت کی انتہا قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ ایک بار پھر پختون خطے میں اشتعال اور تشدد کو فروغ دینے کیلئے راہ ہموار کی جارہی ہے۔

باچاخان مرکز پشاور سے جاری بیان میں اے این پی کے صوبائی صدر ایمل ولی خان نے کہا کہ پختونوں کی تاریخ رہی ہے کہ انہوں نے اقلیتوں کو تحفظ اور بھائی چارے جیسا ماحول فراہم کیا ہے اور ہمیشہ اقلیتوں کے خلاف مذہبی منافرت کی بنیاد پر اٹھنے والے ہاتھوں کو روکا ہے۔ مشتعل ہجوم کا قانون ہاتھ میں لینا اور کسی کے گھروں کو جلانا کیا پیغام دیتی ہے؟ پختونوں کو ان تمام حالات اور واقعات پر گہری نظر رکھنی چاہئیے کیونکہ کسی کو بھی قانون ہاتھ میں لینے کی اجازت نہیں دی جاسکتی۔

اے این پی کے صوبائی صدر نے مزید کہا کہ تشدد اور لاقانونیت کسی بھی شکل میں ہو، اے این پی کھل کر مخالفت اور مذمت کرتی ہے۔ پختونوں سے گزارش کرتے ہیں کہ وہ پرامن رہیں اور کسی بھی موقع پر کسی بھی گروہ کے ذاتی اور سیاسی مقاصد کیلئے لاقانونیت کا راستہ نہ اپنائے۔

ایمل ولی خان کا کہنا تھا کہ دہشتگردی اور انتہاپسندی نے نہ صرف ہماری معیشت اور اقتصاد کو تباہ کردیا بلکہ بین الاقوامی سطح پر ہمارے ساکھ کو بھی نقصان پہنچایا ہے۔تمام امن پسند ذہن رکھنے والوں سے کہتے ہیں کہ وہ عدم تشدد اور پرامن ماحول کے قیام کیلئے اپنا کردار ادا کریں۔