پشاور(پ ر) عوامی نیشنل پارٹی خیبرپختونخوا کے جنرل سیکرٹری سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ بونیر جیل میں شانگلہ اور سوات کے اضافی قیدیوں سے مسائل میں اضافہ ہوا ہے، اپنے دورہ بونیر جیل کے دوران سردارحسین بابک نے قیدیوں سے ملاقاتیں کیں اور ان کے مسائل دریافت کئے، دورے کے موقع پر پارٹی کے مقامی رہنما اور جیل کا عملہ بھی اُن کے ہمراہ موجود تھا۔ عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری سردار حسین بابک نے کہا کہ زیر تعمیر سوات جیل کو جلد از جلد مکمل کیا جائے تاکہ بونیر جیل میں قید سوات کے قیدیوں کو وہاں باعزت منتقل کیا جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ پچھلے تین سالوں سے سوات جیل کی تعمیر کا کام 80 فیصد مکمل ہے لیکن باقی کام کیلئے فنڈز نہ ہونے کی وجہ سے جیل کی تعمیر ابھی تک مکمل نہ ہوسکی، انہوں نے کہا کہ سوات جیل کی تعمیر مکمل کرنے کیلئے حکومت جنگی اور ہنگامی بنیادوں پر فنڈز کا انتظام کرے تاکہ سوات کے قیدیوں کو وہاں منتقل کیا جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ سوات کے قیدیوں کو پیشی کیلئے سوات لے جانے کیلئے محکمہ کے پاس فنڈز نہ ہونے کی وجہ سے وہ عدالتوں میں پیش ہونے سے رہ جاتے ہیں جو کہ لمحہ فکریہ ہے ، انہوں نے کہا کہ حکومت کو قیدیوں کے ان کے بنیادی مسائل پر سنجیدگی کے ساتھ غور کرنا چاہئے ۔ سردار حسین بابک نے کہا کہ بونیر جیل میں قید شانگلہ کے قیدیوں کو بھی اس طرح مشکلات درپیش ہیں لہٰذا حکومت ضلع شانگلہ کے قیدیوں کو شانگلہ میں منتقل کرنے کیلئے انتظامات کرے تاکہ شانگلہ کے قیدیوں کے مسائل ختم ہوں، انہوں نے جیل انتظامیہ کی طرف سے جیل میں قید افراد کیلئے تفریحی پروگراموں کے انعقاد کو سراہا اور توقع ظاہر کی کہ وہ قیدیوں کی بہتر ذہنی نشونما کیلئے تفریحی پروگرامز جاری رکھے گی۔ اے این پی کے صوبائی جنرل سیکرٹری نے کہا کہ حکومت جیلوں میں قید افراد کے تمام جائز مسائل اور مشکلات کے حل کیلئے عملی اقدامات اٹھائے اور سوات جیل کی تعمیر کو جلد از مکمل کیا جائے۔