پشاور (پ ر) عوامی نیشنل پارٹی کی رکن صوبائی اسمبلی ثمر ہارون بلور نے پشاور میں ڈاکٹر برادری پر پولیس کے وحشیانہ تشدد کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت معاملات کی سنگینی کا احساس کرنے سے عاری ہے اور تمام مسائل کو ظلم و جبر کے ذریعے حل کرنے کی کوشش کر رہی ہے، اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ مسیحاؤں کو زخموں سے چور کر کے حکومت شہریوں کو کیا پیغام دینا چاہتی ہے؟ ثمر بلور نے کہا کہ جائز حقوق کیلئے مظاہرہ کرنے والوں پر تشدد کرنا جمہوری دور کی روایات نہیں ہو سکتیں، انہوں نے کہا کہ ملک میں جس کی لاٹھی اس کی بھینس کا قانون رائج ہے، سرکاری ملازمین پر تشدد کی نئی بدترین مثال قائم کی گئی ہے اور یہ سارا ڈرامہ نوشیروان برکی کی خاطر کیا جا رہا ہے،حکومت کی جانب سے واقعے پر مسلسل خاموشی سوالیہ نشان ہے جس کا جواب کسی حکومتی عہدیدار کے پاس نہیں، انہوں نے کہا کہ خیبر پختونخوا کی مثالی پولیس کی حقیقت اب کھل کر سامنے آ گئی ہے،اور وہ بزور طاقت حکمرانی کرنے والوں کے اشاروں پر چل رہی ہے، انہوں نے خبردار کیا کہ پولیس نے زیادتی اور ظلم کا ساتھ دینا ہے تو اس کے خطرناک نتائج بھگتنے کیلئے بھی تیار رہے۔ثمر بلور نے کہا کہ اے این پی ظلم کے اس نظام کے خلاف ہے اور زخمی ڈاکٹروں کے دکھ میں برابر کی شریک ہے،انہوں نے گرفتار ڈاکٹروں کی رہائی اور تشدد میں ملوث اہلکاروں کے خلاف کاروائی کا بھی مظالبہ کیا۔