پشاور (پ ر) عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی جنرل سیکرٹری میاں افتخار حسین نے کہا ہے کہ سلیکٹڈ وزیر اعظم پاکستان برائے فروخت کے ایجنڈے پر کام کر رہا ہے اور ملک کو ان عوام دشمن حکمرانوں سے نجات دلانے کیلئے 25جولائی سے تمام اپوزیشن جماعتیں میدان میں ہوں گی، قبائلی اضلاع انتخابات میں گزشتہ الیکشن کی طرح عوامی مینڈیٹ چوری نہیں کرنے دیں گے،ان خیالات کا اظہار انہوں نے پنیالی پی کے103 ضلع مہمند میں اے این پی کی انتخابی مہم کے دوران جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے کیا، انہوں نے کہا کہ ملکی صورتحال انتہائی گھمیر ہے اور سلیکٹڈ وزیر اعظم ملک کیلئے سیکورٹی رسک بن چکا ہے، میاں افتخار حسین نے کہا کہ حکومت کا جانا نوشتہ دیوار ہے اور اب اسے مزید اقتدار میں رہنے دینا بڑی تباہی کو دعوت دینے کے برابر ہے، ڈالر کی قیمت تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی ہے،روپے کی قیمت قابو سے باہر اور سٹاک ایکسچینج کریش ہو چکی ہے، سرمایہ کاروں کیلئے پاکستان کے دروازے بند ہو چکے ہیں اور آئی ایم ایف سے قرضہ لینے کی بجائے پورا ملک ہی آئی ایم ایف کی جھولی میں ڈال دیا گیا ہے، انہوں نے کہا کہ عمران خان ملک کیلئے سیکورٹی رسک ہے،میاں افتخار حسین نے کہا کہ اسٹیبلشمنٹ کے کردار نے ملک کی بقا داؤ پر لگا دی،آئین پاکستان کی رو سے تمام ادارے اپنے دائرہ اختیار کے اندر رہتے ہوئے کام کریں تو کبھی مشکلات جنم نہیں لیں گی، پختونوں کے حقوق کی جنگ کیلئے آپس کے اتحاد و اتفاق کی اشد ضرورت ہے، انہوں نے مزید کہا کہ احتساب کے نام پر کئے جانے والے انتقام کی پوری دنیا میں مثال نہیں ملتی،انہوں نے خبردار کیا کہ نیب اور اس کے ذریعے انتقامی کاروائیاں کرانے والے مکافات عمل بھی یاد رکھیں،انہوں نے کہا کہ نیب چیئرمین نااہل وزیر اعظم کے باڈی گارڈ بنے ہوئے ہیں اور پشاور بی آر ٹی میں ہونے والی خرد برد،کرپشن اور کمیشن کے دستاویزی ثبوت ہونے کے باوجود آنکھیں بند کر رکھی ہیں،انہوں نے کہا کہ کشکول کے خلاف آواز اٹھانے والا شخص آج دنیا کا سب سے بڑا بھکاری بن چکا ہے،ملک پر قرضوں کے بوجھ لاد دیئے گئے ہیں جنہیں اتارنے کیلئے پاکستان گروی رکھنا پڑے گا، انہوں نے کہا کہ باچا خان نے قوم کو غلامی سے آزاد کرانے کیلئے جدوجہد کی، آج تاریخ نے ثابت کر دیا ہے کہ فخر افغان باچا خان اور ولی خان بابا کی فکر ہی دراصل عدم تشدد، ملک دوستی اور عوام دوستی پر مبنی تھی اور ان کی سوچ کی جتنی ضرورت آج ہے پہلے کبھی نہیں تھی۔انہوں نے کہا کہ اسٹیبلشمنٹ نے تمام سیاسی قوتوں کو دیوار سے لگا کر عمران خان کو حکومت بنانے کے لیے جو راستہ اختیا رکیا وہ پاکستان کی بقاء کے لیے سب سے سنگین خطرہ ہے،میاں افتخار حسین نے کہا کہ نااہل اور سلیکٹڈ حکمرانوں سے قوم کو نجات دلانا ضروری ہے جس کیلئے 25جولائی سے حکومت مخالف تحریک کا آغاز ہو گا، انہوں نے کہا کہ ملک بچانے کیلئے متحدہ اپوزیشن متفق ہے،انہوں نے کہا کہ اے این پی نے روز اول سے قبائلی عوام کے حقوق کیلئے آواز اٹھائی اور انضمام کیلئے کوششیں کیں، قبائلی انتخابات میں کامیابی کے بعد محروم قبائلیوں کی ترقی اور بنیادی سہولیات کی فراہمی اولین ترجیح ہوگی۔