پشاور(پ ر) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری و ڈپٹی اپوزیشن لیڈر سردارحسین بابک نے کہا ہے کہ صوبے میں ترقیاتی منصوبوں کیلئے فنڈز کی غیرموجودگی لمحہ فکریہ ہے، پی کے22 بونیر کے گائوں دکاڑہ میں علاقہ عمائدین اور پارٹی کارکنان سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ عوام اپنی مدد آپ کے تحت ترقیاتی کام جاری رکھنے پر مجبور ہوگئے ہیں۔علاقہ کے عوام خراج تحسین کے مستحق ہیں جنہوں نے چندوں کے ذریعے سڑک کی پختگی کے کام جاری رکھے ہوئے ہیں۔ صوبائی حکومت کو مرکز کے ذمے واجبات کی وصولی کیلئے سنجیدہ اقدامات اٹھائیں تاکہ صوبے کو بجلی کے خالص منافع سمیت دیگر واجبات کا حصول یقینی بنایا جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ علاقہ کے لوگ مجبوراً ترقیاتی کام چندوں اور اپنی مدد آپ کے تحت انجام د ے ہے ہیں۔ حکومت کو صوبے میں عوام کی ضروریات کو مدنظر رکھتے ہوئے ترقیاتی کاموں کیلئے اور جاری سکیموں کی جلد تکمیل کیلئے بلاتاخیر عملی اقدامات اٹھانے ہوں گے۔انہوں نے کہا کہ عوام ٹیکس سمیت تمام حکومتی واجبات بروقت ادا کرتے ہیں، مہنگائی کی طوفان نے عوام کے مسائل میں مزید اضافہ کردیا ہے لیکن حکومت اس کے باوجود صوبے کے طول و عرض میں ترقیاتی کاموں اور عوامی فلاح و بہبود کے منصوبے شروع کرنے سے گریزاں ہے۔ سردارحسین بابک نے کہا کہ صوبائی حکومت کو مرکزی حکومت سے دوٹوک بات کرنی چاہئیے اور صوبے کے حقوق کیلئے سنجیدہ ہونا ہوگا، اس سلسلے میں انہوں نے تجویز دی کہ صوبائی اسمبلی میں ایک پارلیمانی جرگہ تشکیل دینا چاہئیے تاکہ صوبے کے غریب عوام کی جائز ضروریات اور مطالبات پورے کرنے کیلئے فنڈز کی دستیابی ممکن ہوسکے۔ اے این پی کے صوبائی جنرل سیکرٹری کا کہنا تھا کہ مرکز اور صوبے میں ایک ہی جماعت کی حکومت ہونے کے باوجود صوبے کے عوام اپنی بنیادی مسائل کے حل کیلئے چندوں،عطیات اور اپنی مدد آپ کے تحت کام جاری رکھنے پر مجبور ہیں۔ صوبائی حکومت کو سنجیدگی کے ساتھ اس مسئلے کا حل تلاش کرنا ہوگا