پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کو اتحاد میں شمولیت کی باقاعدہ دعوت دے دی گئی ، اس سلسلے میں قومی وطن پارٹی کے صوبائی چیئرمین سکندر حیات شیرپاؤ کی قیادت میں ایک وفد نے باچا خان مرکز پشاور کا دورہ کیا اور اے این پی کو اتحاد میں شمولیت کی دعوت دی ، وفد کے ارکان میں کیو ڈبلیو پی سے اسد آفریدی ایڈوکیٹ، طارق احمد خان ، عوامی ورکرز پارٹی کے شہاب خٹک ،پختونخوا اولسی تحریک سے اجمل آفریدی اور ظاہر شاہ صافی،مزدور کسان پارٹی کے افضل خاموش ،گل حیدر خان ،شکیل وحید اللہ اور نیشنل پارٹی پختونخوا وحدت کے سید مختار باچا شامل تھے ، جبکہ اے این پی کی طرف سے پہلے سے قائم مذاکراتی کمیٹی کے چیئرمین میاں افتخار حسین اور کمیٹی ممبران سینئر رہنما عبدالطیف آفریدی اور صوبائی جنرل سیکرٹری سردار حسین بابک موجود تھے، سکند رحیات شیرپاؤ نے اے این پی کو پختونوں کو درپیش مسائل ومشکلات کے سدباب کیلئے قائم کئے گئے اتحاد میں شمولیت کی دعوت دی ،اے این پی کی مذاکراتی کمیٹی کے ارکان نے وفد کو خوش آمدید کہا اور ان کی طرف سے پیش کردہ بنیادی نکات و لائحہ عمل کا جائزہ لیا، مذاکراتی کمیٹی کے چیئرمین میاں افتخار حسین نے کیو ڈبلیو پی کی جانب سے پختونوں کے اتحاد کیلئے کی جانے والی کوششوں کو سراہا اور واضح کیا کہ اے این پی اس حوالے سے پہلے ہی کوششوں میں مصروف ہے اور پارٹی قائد اسفندیار ولی خان نے گزشتہ الیکشن کے نتائج کے بعد یہ ضرورت محسوس کی کہ پختونوں کو درپیش مسائل کے حل کیلئے گرینڈ اتحاد وقت کی اہم ضرورت ہے اور اسی حوالے سے انہوں نے تمام سیاسی و مذہبی قیادت بشمول مولانا فضل الرحمان ، آفتاب خان شیرپاؤ، محمود خان اچکزئی اور سراج الحق سے اسلام آباد میں حاجی غلام احمد بلور کی رہائشگاہ پر کئی ملاقاتیں بھی کیں اور پارٹی کی جانب سے ایک مذاکراتی کمیٹی بھی تشکیل دی، میاں افتخار حسین نے کہا کہ جب آفتاب احمد خان شیرپاؤ کی طرف سے اتحاد کی خبریں سامنے آئیں تو سب سے پہلے اسفندیار ولی خان نے اس کا خیر مقدم کیا، تاہم پختونوں کو درپیش مشکلات اور جمہوریت کو لاحق خطرات کے سدباب کیلئے اے این پی پہلے ہی سے اس سلسلے میں کوششوں کا آغاز کر چکی ہے ،انہوں نے کہا کہ تمام سیاسی قیادت کا یکجا ہونا ضروری ہے،انہوں نے وفد کو یقین دلایا کہ ان کے پیش کردہ نکات مذاکراتی کمیٹی بغور جائزہ لے گی اور اس کی روشنی میں ہونے والی پیش رفت کیلئے دوبارہ ملاقات کی جائے گی۔