چارسدہ(پ ر)جمیعت علمائے اسلام کے صوبائی امیر سینیٹر مولانا عطاء الرحمان کی ولی باغ چارسدہ آمد،ولی باغ چارسدہ میں اے این پی کے صوبائی صدر ایمل ولی خان سے آزادی مارچ کے حوالے سے خصوصی ملاقات۔تفصیلات کے مطابق جے یو آئی کے صوبائی امیر مولانا عطاء الرحمان کی ولی باغ چارسدہ میں اے این پی کے صوبائی صدر ایمل ولی خان سے آزادی مارچ کے حوالے سے خصوصی ملاقات ہوئی،جس میں جے یو آئی کے صوبائی امیر نے آزادی میں خصوصی تعاون اور شرکت پر اے این پی قائدین کا شکریہ ادا کیا اور 31اکتوبر کے حوالے سے خصوصی لائحہ عمل پر غور کیا گیا۔اس موقع پر اے این پی کے صوبائی صدر ایمل ولی خان نے کہا کہ اے این پی اپنے پروگرام کے مطابق آزادی مارچ میں شرکت کریگی،اے این پی کارکنان 31اکتوبر کو صبح 11بجے رشکئی انٹرچینج سے ملی مشر اسفندیار ولی خان کی قیادت میں اسلام آباد کیلئے روانہ ہونگے۔انہوں نے کہا کہ اے این پی 200فیصد آزادی مارچ کا حصہ ہیں،جو فیصلہ مارچ کے حوالے سے اپوزیشن کے رہبر کمیٹی کا ہوگا وہی اے این پی کا فیصلہ ہوگا،الیکشنز میں اداروں کی مداخلت کے خاتمے،ملک میں جمہوریت کی بقاء،آئین کے تحفظ اور ووٹ کے تقدس کیلئے اے این پی آزادی مارچ کا حصہ ہے،2013کے بعد یہ دوسری بار ہے کہ اے این پی کا مینڈیٹ چوری کیا جارہا ہے،اے این پی اور سیاسی پارٹیاں کب تک یہ برداشت کرتی رہی گی کہ اُن کا مینڈیٹ چوری کرکے مقتدر قوتیں اپنے من پسند لوگوں کو اقتدار حوالہ کریں۔ایمل ولی خان نے مزید کہا کہ 2013کے انتخابات میں پورے ملک کا چیف الیکشن کمشنر فخر الدین جی ابراہیم تھا جبکہ اے این پی امیدواروں کے مستقبل کا فیصلہ وزیرستان میں بیٹھے حکیم اللہ محسود کررہا تھا،اُس کے باوجود بھی اے این پی نے جمہوریت کی مضبوطی کے خاطر اُس الیکشن کے نتائج تسلیم کیے،اس بار دہشتگردوں کی جگہ ہمارے بکسے اُن لوگوں نے چوری کیے جنہوں نے عمران خان کو اقتدار حوالہ کیا ہے۔انہوں نے کہا کہ اے این پی مارچ میں بھرپور شمولیت کا فیصلہ کرچکی ہے،اگر اے این پی کو روکا گیا تو اے این پی خیبرپختونخوا، صوبے کے ہرضلع کو بند کریگی۔جے یو آئی کے صوبائی امیر نے اپنی باتوں میں اے این پی قائدین کا مارچ میں مکمل تعاون اور شرکت پر شکریہ اداد کیا اور اس عہد کا اعادہ کیا کہ ملک میں اصل جمہوریت کی بحالی اور ووٹ کے تقدس کیلئے مارچ جاری رہے گا۔