پشاور (پ ر) عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی صدر اسفندیار ولی خان نے اے این پی سٹی کے صدر سرتاج خان پر فائرنگ کی مذمت اور سانحے میں ان کی شہادت پر انتہائی رنج و غم کا اظہار کیا ہے، اپنے ایک مذمتی بیان میں انہوں نے کہا کہ دہشت گردوں کی اندرون شہر موجودگی نے سیکورٹی کی صورتحال واضح کر دی ہے،شہریوں کی جان کسی طور محفوظ نہیں اور سرتاج خان کی شہادت نے دہشت گردوں کی کمر توڑنے کے دعوؤں پر سوالیہ نشان لگا دیا ہے،انہوں نے کہا کہ گزشتہ سال ہارون بلور کی شہادت کے بعد سرتاج خان کی شہادت شاید اے این پی کیلئے خفیہ پیغام ہے، اے این پی کو راستے سے ہٹانے کیلئے ریاستی سرپرستی میں پلنے والے دہشت گردوں کو کھلی چھوٹ دے دی گئی ہے، حکومت سو رہی ہے اور شہری دہشت گردوں کے رحم و کرم پر ہیں،تاہم باچا خان کے سپاہی اپنے مشن سے کسی طور پیچھے نہیں ہٹیں گے،اسفندیار ولی خان نے کہا کہ قاتلوں کو فوری طور پر گرفتار کر کے کٹہرے میں لایا جائے اور انہیں قرار واقعی سزا دی جائے،انہوں نے کہا کہ دہشت گرد عوامی نیشنل پارٹی کو میدان سے باہر رکھنا چاہتے ہیں وہ پیٹھ پر وار کرنا چھوڑ دیں اور سامنے آ کر مقابلہ کریں۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ کچھ بھی ہوجائے میدان نہیں چھوڑیں گے۔ انہوں نے کہا کہ پہلے بھی عوامی نیشنل پارٹی کو انتخابی عمل سے دور رکھنے کی کوششیں کی گئیں لیکن اس میں بھی انہیں ناکامی ہوئی اور اب قبائلی انتخابات سے باہر رکھنے کیلئے قتل عام شروع کر دیا گیا ہے،انہوں نے کہا کہ کچھ بھی ہو جائے اے این پی میدان نہیں چھوڑے گی۔