پشاور (پ ر) عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی صدر اسفندیار ولی خان نے کابل میں بم دھماکوں کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے سانحے میں جاں بحق ہونے والوں کی مغفرت اور زخمیوں کی جلد صحت یابی کیلئے دعا کی ہے، اپنے ایک مذمتی بیان میں انہوں نے کہا کہ کابل میں ہونے والی دہشت گردی اپنی نوعیت کی بدترین کاروائی ہے اور غم کی اس گھڑی میں ہم افغان عوام اور حکومت کے ساتھ ہیں، انہوں نے لواحقین کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کیا اور کہا کہ پاکستان اور افغانستان کو مل کر دہشت گردوں کے خلاف مشترکہ اور مربوط کاروائی کرنی چاہئے،انہوں نے کہا کہ قطر میں طالبان کے ساتھ مذاکرات اور کابل میں دھماکے دنیا کیلئے واضح پیغام ہے،دنیا کو فکر مند ہونا ہو گا کہ غلطیاں کس طرف سے ہو رہی ہیں، ایک ایسے وقت میں جب افغان امن عمل کیلئے مذاکرات جاری ہیں حالیہ کارروائی افغان سرزمین پر جاری دہشت گردی کے خلاف جنگ میں جلتی پر تیل کا کام کرے گی، انہوں نے کہا کہ افغان حکومت امن مذاکرات کا براہ راست حصہ نہ ہو تو مذاکرات مشکوک ہی رہیں گے،اے این پی کا روز اول سے یہی مؤقف ہے کہ اصل مذاکرات وہی ہونگے جو افغان حکومت کی شمولیت اور سربراہی میں ہوں،انہوں نے خطے کے ممالک پر بھی زور دیتے ہوئے کہا کہ افغانستان میں پھٹتے بموں پر ایشیا کو دردمند ہونا پڑے گا،دہشت گردی و تشدد کسی صورت بھی فائدہ مند نہیں ہو سکتی،حالیہ دہشت گرد کارروائیوں کا بظاہر مقصد خطے کو غیر مستحکم کرنا ہے، انہوں نے اپنے بیان میں خیبر پختونخوا پر بھی تشویش کا اظہار کیا اور کہا کہ خیبر پختونخوا میں امنیتی اداروں اور سیاسی کارکنوں کی ٹارگٹ کلنگ دہشت گردی کی نئی لہر کی آہٹ ہے۔ اسفندیار ولی خان نے کابل دھماکوں میں جاں بحق افراد کے اہل خانہ کے صبر جمیل اور زخمیوں کی جلد صحت یابی کیلئے بھی دعا کی۔