پشاور(پ ر)عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر ایمل ولی خان نے کہا ہے کہ پختونوں کی قومی تذلیل کی جارہی ہے،ہزاروں کی تعداد میں ہمارے پختون گھروں سے لاپتہ ہیں،انکے بچوںکو خبر تک نہیں دی جارہی کہ ان کے بابا زندہ ہے یا مرگیا ہے؟ لاکھوں کی تعداد میں صاحب حیثیت لوگ خیموں میں زندگی بسر کرنے پر مجبور ہیں،یہ ریاست ہے یا جنگل؟ دورہ بنوں کے دوران ممندخیل اور تحصیل ککی خوجڑی میں عوامی اجتماعات سے خطاب کرتے ہوئے ایمل ولی خان نے کہا کہ بنو ں کے عوام نے امن کی خاطر بہت قربانیاں دی ہیں، آج بہت سے لوگ سوچتے ہیں کہ اے این پی والے ووٹ لینے کیلئے آئی ہے،مگر انتخابا ت دور ہیں ہم اپنا منشور گھر گھر تک پہنچائیں گے ۔ اے این پی کے صوبائی صدر کا کہنا تھا کہ ریاست پاکستان میں سب سے بڑا مسئلہ پختونوں کو یہ درپیش ہے کہ اُن سے جینے کا حق چھین لیا گیا ہے ،پختونوں کی قومی تذلیل کی جارہی ہے،ہزاروں کی تعداد میں ہمارے پختون گھروں سے لاپتہ ہیںان کے بچوں کو خبر تک نہیں دی جاتی کہ اُن کا بابا زندہ ہے کہ مرگیا ہے؟یہ ریاست ہے کہ جنگل؟لاکھوں کی تعداد میں ہمارے صاحب حیثیت لوگ خیموں میں زندگی گزارنے پر مجبور ہیںایمل ولی خان کا کہنا تھا کہ اٹھارویں ترمیم کے بعد اے این پی کی راہ میں رکاوٹیں کھڑی کی گئی ہمیں اگر آج دیوار سے لگایا جارہا ہے تو یہ صرف اس وجہ سے ہے کہ ہم نے پشتونوں کے حق کیلئے آواز اٹھائی اور مرکز سے عوام کا حصہ یہاں لے آئے اب جن لوگوں کو اس صوبے پر مسلط کیا گیا ہے وہ اپنا حصہ تک نہیں لاسکتے ریاست اگر ہمیں پارلیمنٹ سے باہر رکھنے کی کوشش میں لگے ہیں تو انہیں کرنے دیں لیکن پشتونوں کے حق کی بات کرنا اور اپنے وسائل کا جنگ لڑنے سے ہمیں کوئی نہیں روک سکتا ۔اس موقع پر صوبائی صدر نے ضلعی صدر تیمور باز خان،تحصیل صدر ملک شیروز خان،محمد رقیب خان اور کارکنان کے ہمراہ اسرائیل وزیر کی قبر پر حاضری دی اور فاتحہ خوانی کی۔ اس موقع پر اُنہوں نے کہاکہ ہمارے دل کو تسلی مل گئی ہے کہ ہم نے شہید اسرائیل کی قبر پر حاضری دی 21 ویں صدی میں پشتون مختلف مسائل میںپھنسے ہیںہمارے جوان اور خواتین انتہائی پریشان ہیںہماری بہنیں شہید کی گئی ہیں اسلام کے نام پر مسجدوں کو شہید کیا گیا۔ ہم باچاخان کے پیروکار ہیں ،وہ امن کے پیروکار تھے ہم نے دہشت گردوں کے سامنے سر نہیں جھکایامعصوم بچوں نے کونسی غلطی کی ہے کہ وہ سکولوں میں بے گناہ مارے جارہے ہیں اُنہوں نے کہا کہ ہمارا صوبہ ہر قسم کے وسائل سے مالا مال ہے لیکن صوبے سے فائدہ پنجاب کے لوگ لے رہے ہیں عنقریب ہم امن کا پیغام لے کر وزیرستان جائیں گے اور لوگوں کو بتائیں گے کہ اصل میں ان کے ساتھ کیا کچھ ہوتا رہاہے، ہم مزید پشتونوں کے ساتھ ہونیوالی زیادتی برداشت نہیں کریں گے۔