شیرگڑھ(پ ر) عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی سنیئر نائب صدر امیر حیدر خان ہوتی نے کہا ہے کہ اپوزیشن کو کسی این آر او کی ضرورت بلکل نہیں ہے۔ بے اختیار وزیر اعظم کے ستارے آئندہ سال میں نظر نہیں آئیں گے۔ دسمبر کے بعد سلیکٹڈ حکمرانوں کو اپنے لئے ضرور این آر او کی ضرورت ہوگی۔

یونین کونسل لوند خوڑ کے علاقہ شینگرئی میں بڑے شمولیتی جلسے سے خطاب کرتے ہوئے امیرحیدر خان ہوتی نے کہا کہ جن قوتوں نے جمہوری اور عوامی پارٹیوں کو عوام سے دور کیا، پی ڈی ایم وہی پس پردہ او پوشیدہ قوتوں کو بے نقاب کرکے دم لے گی۔اے این پی کے کارکنان پی ڈی ایم میں موثر ، فیصلہ کن اور ہر اول دستے کا کردار ادا کریگی۔

تقریب میں اے این پی کی صوبائی نائب صدر شازیہ اورنگزیب، اے این پی ضلع مردان کے صدر حاجی لطیف الرحمان، اے این پی کے رکن مرکزی مجلس عاملہ فاروق اکرم خان، تحصیل تخت بھائی کے صدر ناصر خان اور دیگر رہنمائوں نے بھی خطاب کیا۔ تقریب میں مختلف جماعتوں کے کارکنان اور بااثر خاندان کے اہم شخصیات نے اے این پی میں شمولیت کا اعلان کیا جن میں شیر محمد راجہ استاد،شیزور خان، عرفان خان، سلطان خان، سھیل خان اکرم خان، سیف اللہ، ابراہیم خان، ناصر خان، طارق استاد اور دیگر شامل تھے۔

امیرحیدر خان ہوتی نے کہا کہ 2018ء میں عوام نے عمران خان اور انکے ٹولے کو ہرگز مینڈیٹ نہیں دیا بلکہ عوامی مینڈیٹ چوری کرکے جعلی لوگوں کو قوم پر مسلط کیا گیا۔ این آر او کی رٹ لگانے والوں کو دسمبر کے بعد خود این آر او کی ضرورت پڑ ے گی۔

سابق وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا کا کہنا تھا کہ فارن فنڈنگ کیس، مالم جبہ، ہیلی کاپٹر، بی آر ٹی ،چینی، گندم، آٹااور دیگر کرپشن سکینڈلز میں ملوث تحریک انصاف کے بڑے بڑے رہنما این آر او کی قطار میں کھڑے ہوں گے۔ پی ڈی ایم سنجیدہ اور محب وطن جمہوری سیاسی قوتوں پر مشتمل اتحاد ہے جو جعلی حکمرانوں سے عوام کو نجات دلا کر دم لے گی۔

انہوں نے کہا کہ ایک کروڑ نوکریاں اور پچاس لاکھ گھر کہاں ہیں؟ سرکاری ملازمین یہاں تک کہ عورتیں ڈی چوک میں حکومت کے خلاف دھرنے پر مجبور ہیں۔نااہل حکومت کی غلط پالیسیوں کی وجہ سے عوام مہنگائی کے طوفان کا سامنا کررہے ہیں۔