پشاور( پ ر) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری و ڈپٹی اپوزیشن لیڈر سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ حکومت اپوزیشن کیساتھ صوبے کے وسائل صوبے کے تمام علاقوں میں ضرورت اور برابری کی بنیاد پر تقسیم کے اپنے فیصلے کا لحاظ کرے گی۔ خیبرپختونخوا اسمبلی کے اپوزیشن اراکین سے ملاقات کے دوران ممبران کی شکایات پر بات کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ صوبے کے وسائل پر صوبے کے تمام عوام کا یکساں حق ہے،کیونکہ صوبے کے تمام عوام حکومتی واجبات سمیت یوٹیلٹی بل اور ٹیکس و جرمانے جمع کرتے ہیں۔ اپوزیشن ممبران کی شکایات کا ازالہ کیا جائے اور ان کے علاقوں میں ان کے مینڈیٹ کو تسلیم کیا جائے۔ انہوں نے کہاکہ حکومت کو صوبے کے پسماندہ علاقوں کو توجہ دینی چاہیے۔ حکومت کا صوبے کے مسائل پر اپوزیشن کو اعتماد میں نہ لینا صوبے کے عوام کیلئے نقصان کا باعث بن گیا ہے۔ صوبائی حکومت کو مرکزی حکومت کے ذمے صوبے کے واجبات پر دو ٹوک موقف اپنانی چاہیئے۔ صوبائی حکومت نے بلدیاتی انتخابات کے انقعاد کو سرد خانے میں ڈال دیاہے۔حکومت کو اگر ناکامی نظر آرہی ہے تواس کی سزا عوام کو نہیں دینی چاہیے۔ حکومت بی آر ٹی کے معاملے میں احتسابی ادارے کو رکوانے کیلئے عدالت گئے ہیں، اگر کرپشن نہیں کی ہے تو پھر گھبرانا کس بات سے؟ انہوں نے کہاکہ بی آر ٹی کی تحقیقات رکوانے کے عدالتی اپیل نے ان کا اصل چہرہ آشکار کیا ہے۔ ان کا منشور دوسروں کی پگڑیاں اچھالنا اور انتقام لینا ہے، شدید سردیوں کے موسم میں گیس کا نہ ہونا اور کم پریشر ہمارے صوبے کیساتھ آئینی ضمانت کی پامالی ہے۔ انہوں نے کہاکہ آئین نے ہمیں بجلی وگیس کا اختیار دیا ہے لیکن مضبوط مرکز کے خواہاں صاحب اختیار لوگوں نے ہمارے حقوق پر ڈاکہ ڈال دیا ہے۔انہوں نے کہا کہ پختونوں کو اپنی آئینی اور مالی اختیارات کیلئے متحرک ہونا ہوگا۔ صوبائی حکومت اگر پختونوں کی نمائندہ حکومت ہوتی تو آج صوبے کے حقوق پر ڈاکہ ڈالنے کے سامنے خاموش تماشائی نہ ہوتے۔