پشاور( پ ر)عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی جنرل سیکرٹری میاں افتخار حسین نے خیبر ٹیچنگ ہسپتال پشاور میں پشتو زبان کے ممتاز شاعر زرین پریشان کی عیادت کے موقع پر کہا ہے کہ زرین پریشان نے ہمیشہ پختون قوم اور پشتو زبان کے گن گائے ہیں لیکن اُن کی بیمار پرسی کیلئے تاحال کلچر ڈیپارٹمنٹ کا نہ آنا قابل مذمت ہے ،موجودہ صوبائی حکومت نے چند ماہ تک اعزازیوں کے نام پر پشتو زبان کے شعراء کو ٹرخایا لیکن دو تین ماہ بعد اُس سلسلے کو بھی بند کردیا گیا جس کی وجہ سے صوبہ بھر کے شعراء اور ادیب بیمار پڑنے کے بعد کسمپرسی کی زندگی گزارنے پر مجبور ہوجاتے ہیں،انہوں نے کہا کہ اے این پی نے اپنے دور حکومت میں بھی پشتو زبان کے شعراء کو اعزازیوں اور ایوارڈز سے نوازا ہے اور یہ سلسلہ آج تک اے این پی نے جاری رکھا ہوا ہے،عوامی نیشنل پارٹی زرین پریشان کو حکومت یا کسی اور ادارے کے رحم وکرم اور سہارے پر نہیں چھوڑے گی،اے این پی نے پہلے بھی زرین پریشان کے ادبی خدمات کے اعتراف میں اُن کو باچا خان ایوارڈ سے نوازا ہے اور اب بھی اُن کی علاج کیلئے ہر ممکن کوشش کریگی۔