پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ 26ویں آئینی ترمیمی بل قومی اسمبلی کی منظوری کے باوجود ابھی تک سینیٹ سے منظور نہیں ہوا جس سے تاثر دیا جارہا ہے کہ تاخیری حربے استعمال کئے جارہے ہیں، جس کے وجوہات حکومت کو سامنے لاناہوں گے۔ باچاخان مرکز سے جاری کردہ بیان میں ان کا کہنا تھا کہ قبائلی عوام سمیت تمام سیاسی جماعتیں کنفیوژن کا شکار ہیں کہ انتخابات جاری کردہ شیڈول کے مطابق ہوں گے یا تاخیر ہوگی۔ سردارحسین بابک نے کہا کہ قومی اسمبلی میں سیاسی جماعتوں نے متفقہ طور پر آئینی ترمیم منظور کی، وہی جماعتیں سینیٹ میں بھی بیٹھی ہوئی ہیں، تاخیری حربوں سے عوام اور سیاسی جماعتوں کو کیا پیغام دیا جارہا ہے؟ انہوں نے مطالبہ کیا کہ حکومت اس بل کوایوان بالا سے منظوری میں خصوصی دلچسپی کا مظاہرہ کریں اور چیئرمین سینیٹ کو بھی اس طرف خصوصی توجہ دینی چاہیئے تاکہ قبا ئلی اضلاع کو ان کا حق ملے ، وہاں ترقی کا دور جلد ازجلد شروع ہو اور قبائلی عوام نے جو جانی و مالی نقصانات اٹھائے ہیں ان کا ازالہ ہوسکے ۔