پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ قبائلی انضمام کیلئے کی جانے والی اے این پی کی کوششیں قابل ستائش ہیں اور قبائلی اضلاع کے انتخابات میں 25جولائی کی تاریخ نہیں دہرانے دیں گے۔اپنے ایک بیان میں انہوں نے قبائلی انتخابات کیلئے جاری شیڈول پر عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ امیدواروں کے ناموں کو حتمی شکل دینے کیلئے انتہائی کم وقت دیا گیا ہے جبکہ کاغذات نامزدگی کیلئے دو دن کا وقت مقرر کیا گیاجو کسی صورت کافی نہیں ، انہوں نے مطالبہ کیا کہ الیکشن کمیشن انتخابی شیڈول پر نظر ثانی کرتے ہوئے کاغذات نامزدگی جمع کرانے کی تاریخ میں توسیع کرے ، سردار حسین بابک نے کہا کہ قبائلی عوام کی ووٹر لسٹ تاحال تیار نہیں کی گئی اگر ووٹر لسٹ مکمل ہے تو اسے عوام کے سامنے پیش کیا جائے، انہوں نے کہا کہ لاکھوں قبائلی عوام آئی ڈی پیز کی صورت میں کیمپوں میں مقیم ہیں جس سے انتخابی نتائج پر منفی اثر پڑے گا اور ٹرن آوٹ نہ ہونے کے برابر ہو گا،انہوں نے کہا کہ اے این پی طویل عرصہ سے کیمپوں میں رہنے والے قبائلیوں کی ان کے گھروں کو با عزت واپسی کیلئے مطالبات کرتی آئی ہے لیکن سوچے سمجھے منصوبے کے تحت ایسا نہیں کیا گیا ، حکومت قبائلی انتخابات میں دھاندلی کا پروگرام فائنل کر چکی ہے تاہم اے این پی کے کارکن ڈٹ کر مقابلہ کریں گے اور25جولائی کی تاریخ نہیں دہرانے دیں گے، سردار بابک نے کہا کہ انتخابی شیڈول میں الیکشن کمیشن نے جن ضابطہ اخلاق کا ذکر کیا ہے اس کی دھجیاں بکھیری جا چکی ہیں ، وزیر اعظم اور وزراءقبائلی علاقوں کے دوروں کے دوران سیاسی رشوت کے طور پر اعلانات کر رہے ہیں جس کا کوئی نوٹس نہیں لیا جا رہا ، انہوں نے الیکشن کمیشن سے مطالبہ کیا کہ کٹھ پتلی بننے کی بجائے انتخابی ضابطہ اخلاق پر عمل درآمد یقینی بنانے کیلئے ترجیحی بنیادوں پر کام کرے،انہوں نے کہا کہ مائنز کی صفائی کا کام تاحال مکمل نہیں کیا گیا جبکہ لاپتہ افراد کا معاملہ معمولی جنبش کے بعد سردخانے کی نذر کر دیا گیا ہے، انہوں نے کہا کہ اے این پی قبائلی اضلاع کے انتخابات میں کامیابی کے بعد دربدر ہونے والے قبائلیوں کا احساس محرومی ختم کرنے کیلئے ہر ممکن اقدامات کرے گی،سردار بابک نے کہا کہ وزراءکی طرف سے قبائلی اضلاع کے دورے اور ترقیاتی سکیموں کے اعلانات دھاندلی کا حصہ ہیں اور الیکشن کمیشن اس پر پابندی کیلئے ٹھوس الیکشن لے بصورت دیگر اے این پی احتجاج کا حق محفوظ رکھتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن اپنے اختیار اور ذمہ داری کا احساس کرتے ہوئے غیر جانبدارانہ و شفاف انتخابات کو یقینی بنائے ،انہوں نے کہا کہ سیکورٹی فورسز کے اہلکاروں کو کسی صورت پولنگ سٹیشنوں میں گھسنے کی اجازت نہیں دیں گے ، اے این پی پوری تیاری کے ساتھ میدان میں اترے گی اور اگر اس بار عوامی مینڈیٹ چوری کرنے کی کوشش کی گئی تو خطرناک نتائج سامنے آئیں گے۔