عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی جنرل سیکرٹری میاں افتخار حسین نے کہا ہے کہ شاعر زندگی کے آئینہ دار ہوتے ہیں اور معاشرے کی بہتر انداز میں ترجمانی کرتے ہیں، شعرا ء ہمارا قیمتی اثاثہ ہیں ان کی ہر فورم پر حوصلہ افزائی کیلئے کوششیں کی جائیں گی،ان خیالات کا اظہار انہوں نے باچا خان مرکز پشاور میں خواتین شعراء روشن کلیم سرہندی اور سویرا خان ننگیالی کی پشتو شاعری کی دو کتابوں (خاموش چغے و د گلونو قیصے) کی تقریب رونمائی سے خطاب کرتے ہوئے کیا، اس موقع پر پروفیسر ڈاکتر نصر اللہ جان وزیر اعزای مہمان اور نورالامین یوسفزئی مہمان خصوصی تھے جبکہ تقریب کی صدارت پروفیسر ڈاکٹر شیر زمان سیماب اور نظامت عاصمہ اخلاص نے کی،میاں افتخار حسین نے انتہائی کٹھن کاوش پر دونوں لکھاریوں کو خراج تحسین پیش کیا اور کہا کہ ہمارا معاشرہ اس نہج پر کھڑا ہے جہاں اس قسم کی کتابوں کی اشد ضرورت تھی، میاں افتخار حسین نے کہا کہ خوبصورت شاعری پر مبنی کتابوں سے دہشت گردی سے متاثرہ صوبے کے عوام کے زخموں پر مرہم رکھنے کی کوشش کی گئی ہے اور اس سے یہ بات ثابت ہو گئی ہے کہ ہماری خواتین آج اُن قدغنوں سے آزاد ہیں جو ان پر 50سال قبل لگائی گئی تھیں،انہوں نے کہا کہ ہماری مٹی اور وطن بہت خوبصورت ہے اور اس دھرتی نے پشتو ادب میں کئی نامور نام پیدا کئے ہیں۔ انہوں نے کہا ہے کہ شعراء ایک پر امن اور مثالی معاشرے کے قیام کیلئے اہم کردار ادا کرسکتے ہیں۔