پشاور(پ ر)عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری و ملگری استاذان کے صوبائی ایڈوائزر سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ اے این پی دور حکومت میں اساتذہ کے حل طلب مسائل حل ہوگئے تھے،اس مقصد کیلئے اے این پی نے تعلیم کے فروغ اور تعلیم و تربیت کو عام کرنے کیلئے تاریخی اقدامات اٹھائے ہیں۔باچا خان مرکز میں مختلف اساتذہ تنظیموں سے بات چیت کرتے ہوئے سردار حسین بابک نے کہا کہ آل ٹیچر ایسوسی ایشن کے انتخابات میں ملگری استاذان بھرپور اور موثر انداز میں حصہ لے گی لیکن تاحال ضلعی،تحصیل اور صوبائی عہدوں کیلئے امیدواروں کا فیصلہ نہیں ہوا ہے،سردار حسین بابک نے اس موقع پر کہا کہ تعلیم کا فروغ پارٹی کا مشن اور منشور ہے،یہی وجہ ہے کہ کہ صوبے کی تاریخ میں پہلی دفعہ اساتذہ کو اپ گریڈیشن،پروموشن،سروس سٹرکچر اور چار درجاتی فارمولے کے ذریعے اُن کو جائز حق اور مقام دیا۔انہوں نے کہا کہ یہ اعزاز اے این پی کو حاصل ہے کہ ہماری حکومت سے پہلے اساتذہ اپنے جائز حقوق اور مطالبات کیلئے جلسے،جلوس اور احتجاجیں کرتے تھے لیکن اے این پی نے اقتدار میں آتے ہی اساتذہ کے تمام مطالبات تسلیم کیے اور اساتذہ کو تکریم بخشا۔سردار حسین بابک نے کہا کہ اے این پی دور کے سروس سٹرکچر کی بدولت مڈل،ہائی اور ہائیر سیکنڈری سکولوں میں اساتذہ کو محکمانہ پروموشن ملا اور روزگار کے ہزاروں نئے مواقع پیدا ہوئے۔سردار حسین بابک نے کہا کہ اقتدار میں آنے کے بعد تعلیم اے این پی کی پہلی کی طرح ترجیح رہے گی اور تعلیم کے فروغ اور عام کرنے کیلئے تمام وسائل بروئے کار لائے گی۔سردار حسین بابک نے کہا کہ اے این پی اساتذہ کو انتہائی قدر اور احترام کی نظر سے دیکھتی ہے اور یہی وجہ ہے کہ آج صوبے کے دوسرے سرکاری ملازمین کی طرح اساتذہ اے این پی کے دور حکومت کو انتہائی قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں۔ان کا مزید کہنا تھا کہ حکومت نے پہلے بھی اساتذہ کے انتخابات کا اعلان کیا تھا لیکن بعد میں اُس سے مکر گئی اگر اس بار انتخابات ہوئے تو ملگری استاذان اُس میں بھرپور کامیابی حاصل کریگی اسی طرح دوسرے اساتذہ تنظیموں سے مذاکرات کے دروازے بھی ہر وقت کھلے رہینگے۔