اے این پی نے کالاباغ ڈیم کے خلاف صوبائی اسمبلی میں قرارداد جمع کرادی

قرارداد سردار حسین بابک نے جمع کرائی، متنازعہ مسئلے کو چھیڑنے سے قومی یکجہتی کو نقصان پہنچایا جا رہا ہے۔

ملک کے ایک حصہ کو خوش کرنے کیلئے متنازعہ مسئلے کو اٹھانا کسی طور ملک کے مفاد میں نہیں۔

چھوٹے صوبوں کی بار بار مخالفت کے باوجود مسئلے کو اٹھانا نااتفاقی پیدا کرنے کے سوا کچھ نہیں۔

کالاباغ کی بجائے دوسرے سود مند ڈیم بنانے کیلئے سنجیدہ ،فوری اور عملی اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے۔

ملک میں توانائی کے بحران پر قابو پانے کیلئے ذمہ دارانہ رویہ اپنانا ہو گا۔قرارداد کا متن

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی نے خیبر پختونخوا اسمبلی میں کالاباغ ڈیم کے خلاف قرارداد جمع کرا دی ، قرارداد پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری و پارلیمانی لیڈر سردار حسین بابک نے جمع کرائی جس میں صوبائی حکومت کی توجہ اس جانب مبذول کرائی گئی ہے کہ۰ کالاباغ ڈیم ایک متنازعہ ڈیم ہے اور ملک کے تین صوبے اس کے خلاف ہیں ، بار بار اس متنازعہ مسئلے کو چھیڑنے سے قومی یکجہتی کو نقصان پہنچایا جا رہا ہے ، قرارداد میں کہا گیا ہے کہ ملک کے ایک حصہ کو خوش کرنے کیلئے متنازعہ مسئلے کو اٹھانا کسی طور ملک کے مفاد میں نہیں ، انہوں نے کہا کہ ملک کے چھوٹے صوبوں کی بار بار مخالفت کے باوجود اس مسئلے کو اٹھانا افراتفری اور نااتفاقی پیدا کرنے کے سوا کچھ نہیں،، انہوں نے کہا کہ کالاباغ ڈیم کا شوشہ چھوڑنے کی بجائے ملک کے دوسرے سود مند ڈیم بنانے کیلئے سنجیدہ ،فوری اور عملی اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے، سردار حسین بابک نے کہا کہ ملک میں توانائی کے بحران پر قابو پانے کیلئے ذمہ دارانہ رویہ اپنانا ہو گا ہمارے صوبے میں سستی بجلی پیدا کرنے کے بے شمار مواقع موجود ہیں لیکن بدقسمتی سے حکمرانوں کی عدم توجہی کی وجہ سے پانی ضائع ہو رہا ہے اور ملک کو توانائی بحران کا سامنا ہے ،انہوں نے کہا کہ کالاباغ ڈیم جیسے متنازعہ منصوبے کے خلاف پختونخوا اسمبلی سے کئی قراردادیں متفقہ طور پر منظور ہو چکی ہیں لہٰذا یہ صوبائی اسمبلی کالاباغ ڈیم کے خلاف قرارداد منظور کرتے ہوئے مطالبہ کرتی ہے کہ اس مسئلے کو بار بار اٹھانے سے گریز کیا جائے اور یہی ملک وقوم کے مفاد میں ہے۔