پی کے71میں اے این پی کی کامیابی موجودہ حکومت پر عوام کا اظہار عدم اعتماد ہے، میاں افتخارحسین
حکمرانوں کو گورنر کے اپنے حلقے میں شکست دے کر عوام نے ثابت کیا کہ ان کا مینڈیٹ جعلی تھا۔
حکومت مخالف امیدوار کی کامیابی گذشتہ انتخابات کی دھاندلی کا ثبوت ہے۔
موجودہ حکومت نہ خود چل سکتی ہے، نہ حکومت چلانے کی اہل ہے، خود ہی استعفی دے۔
فوج اور پولیس کا پولنگ اسٹیشنوں کے اندر تعنیات کرنے سے اچھا تاثر نہیں جارہا، میڈیا سے بات چیت

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی جنرل سیکرٹری میاں افتخارحسین نے عوامی نیشنل پارٹی کے ارکان اور متحدہ اپوزیشن کے ساتھیوں پی کے 71 میں اے این پی کے امیدوار صلاح الدین کی کامیابی پر مبارک باد پیش کی ہے۔ وہ الیکشن کمیشن کے صوبائی دفتر میں میڈیا سے بات چیت کررہے تھے۔ نومنتخب امیدوار صلاح الدین بھی ان کے ہمراہ تھے۔
میاں افتخارحسین نے کہا کہ پی کے 71 میں نہ صرف یہ کہ اے این پی کے کارکنوں نے ایک جوش اور ولولے کے ساتھ پارٹی امیدوارکی کامیابی کیلئے انتھک محنت کی بلکہ اتحادی جماعتوں نے بھی کھل کر اور خلوص سے ہمارا ساتھ دیا جس پر ہم سب کے مشکور ہیں۔
میاں افتخارحسین نے کہا کہ ایک نشست جیتنا تعداد کے حساب سے کوئی تبدیلی تو نہیں لاسکتا لیکن پچھلے پچاس دنوں میں حکومت نے جس طرح عوام دشمن پالیسیاں اختیار کی ہیں، ضمنی الیکشن کی یہ نتیجہ موجودہ حکومت پر اظہار عدم اعتماد ہے اور وفاق اور صوبے میں حکمران جماعت کو ان کے گورنر کے حلقے میں شکست سے دوچار کرکے عوام نے ایک پیغام دیا ہے اور وہ پیغام یہ ہے کہ موجودہ حکومت کے ساتھ یہ مینڈیٹ جعلی تھا، یہ حکومت عوامی امنگوں کا ترجمان ہرگز نہیں اور عوام حکومت اور ان کی پالیسیوں کو تسلیم نہیں کرتے۔
انہوں نے ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ ضمنی انتخابات کے نتائج اسٹیبلشمنٹ کیلئے نوشتہ دیوار ہیں ، انہوں نے اپیل کی کہ موجودہ حکومت نے جس طرح کی عوام دشمن پالیسیاں اپنا رکھی ہیں، اگر اسٹیبلشمنٹ اسی طرح موجودہ حکومت کی ہمنوا رہتی ہے تو اس سے ان کے نام پر حرف آئے گا۔ میاں افتخارحسین نے مزید کہا کہ فوج اور پولیس کا پولنگ اسٹیشنوں کے اندر تعنیات کرنے سے اچھا تاثر نہیں جارہا۔ انہوں نے الیکشن کمیشن سے اپیل کی کہ قومی و صوبائی انتخابات کے ساتھ ساتھ اور ضمنی انتخابات میں بھی سیکورٹی اداروں کو پولنگ بوتھوں پر مامور کیا جاتا ہے تو اس کے نتیجے میں سیکورٹی اداروں پر اثر پڑنے کا احتمال ہے جو کسی بھی لحاظ سے اس ملک کیلئے درست نہیں ہے۔
انہوں نے سابق صدر پاکستان اصف علی زرداری کی بات کو دھراتے ہوئے کہا کہ موجودہ حکومت نہ خود چل سکتی ہے، نہ ہی اس ملک کو چلانے کی لائق ہے، لہذا بہتر ہے کہ وہ خود ہی مستعفی ہوجائے۔