حکومتی وزراء کے بیانات سے شکوک و شبہات اور خدشات جنم لر رہے ہیں، زاہد خان
وزیر خارجہ نے اپنی تقریر میں ہزاروں پاکستانیوں کے قاتل طالبان کو اثاثہ قرار دیا ۔
اقوام متحدہ میں تقریر سے دنیاکو پیغام دیا گیا کہ ہم امن کے خلاف ہیں۔
طالبان بنانے اور انکی سرپرستی کرنے والے خود بے نقاب ہو رہے ہیں
سیاسی معاملات میں عدلیہ اور فوج کا نام استعمال کیا جانا بذات خود سوالیہ نشان ہے۔
بدعنوانی کے خلاف واویلا کرنے والی حکومت کے زیادہ تر وفاقی اور صوبائی وزراء خود نیب زدہ ہیں۔

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی ترجمان زاہد خان نے کہا ہے کہ حکومتی وزراء کے بیانات سے شکوک و شبہات اور خدشات جنم لر رہے ہیں اور دنیا کو یہ پیغام دیا جا رہا ہے کہ امن کے خلاف ہیں،اپنے ایک بیان میں ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے انہوں نے اس امر پر افسوس کا اظہار کیا کہ طالبان سینکڑوں بلکہ ہزاروں پاکستانیوں کے قاتل ہیں لیکن وزیر خارجہ نے اقوام متحدہ میں اپنی تقریر کے دوران طالبان کو اثاثہ قرار دیا ،انہوں نے کہا کہ اس تقریر سے دنیا کو یہ پیغام دیا گیا کہ ہم امن کے خلاف ہیں،زاہد خان نے کہا کہ طالبان بنانے اور انکی سرپرستی کرنے والے خود بے نقاب ہو رہے ہیں،انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ میں وزیر خارجہ کی تقریر کے موقع پر کالعدم تنظیموں کے سربراہ وزیر مذہبی امور سے ملاقات کرتے ہیں جس سے خدشات بڑھے اور ثابت ہوا کہ حکومت ہی دہشت گردوں کی سرپرستی کر رہی ہے،انہوں نے وزیر اطلاعات کے بیان پر بھی تعجب کا اظہار کیا جس میں انہوں نے اعتراف کیا کہ فوج اور عدلیہ حکومت کی پشت پر ہیں ،زاہد خان نے کہا کہ حکومت کے اپنے وزراء سارا کھیل قوم کے سامنے لا رہے ہیں،انہوں نے کہا کہ کیا وزیر اطلاعات یہ کہنا چاہتے ہیں کہ ماضی کی حکومتوں کے ساتھ ادارے تعاون نہیں کرتے تھے ؟انہوں نے کہا کہ سیاسی معاملات میں عدلیہ اور فوج کا نام استعمال کیا جانا بذات خود سوالیہ نشان ہے ، انہوں نے کہا کہ بدعنوانی کے خلاف واویلا کرنے والی حکومت کے زیادہ تر وفاقی اور صوبائی وزراء خود نیب زدہ ہیں۔