تقرر وتبادلوں کی آڑ میں سرکاری ملازمین کو انتقامی کاروائیوں کا نشانہ بنایا جا رہا ہے، سردار حسین بابک
تمام محکموں میں سیاسی بنیادوں پر اکھاڑ پچھاڑ نے صوبے کو انتظامی طور پر مفلوج و بدحال کر دیا ہے۔
عدلیہ سرکاری ملازمین کو تقرر و تبادلوں کے نام پر ہراساں کئے جانے کا نوٹس لے۔

محکمہ تعلیم کا صرف چند ماہ میں حلیہ بگاڑ دیا گیا ، روزانہ سینکڑوں ملازمین سبکدوش ہو رہے ہیں۔
حکومتی ممبران محکموں کے سربراہوں کو آئے روز من پسند ملازمین کی لسٹیں تھما رہے ہیں۔
حکومت نے اپنے سابق دور میں سرکاری ملازمین کی حددرجہ تذلیل کی ۔
پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ صوبائی حکومت نے سیاسی بنیادوں پر سرکاری افسران کے تبادلوں اور تمام محکموں میں اکھاڑ پچھاڑ نے صوبے کو انتظامی طور پر مفلوج و بدحال کر دیا ہے، اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ مالی طور پر دیوالیہ صوبے میں آئے روز تمام محکموں میں انتقامی کاروائیاں جاری ہیں اور سرکاری ملازمین کو ہراساں کیا جا رہا ہے ،ملازمین کا اروزانہ کی بنیاد پر تبادلوں سے برا حال ہے جبکہ حکومتی ممبران محکموں کے سربراہوں کو روزانہ کی بنیاد پر من پسند ملازمین کی لسٹیں تھما دیتے ہیں،انہوں نے کہا کہ محکمہ تعلیم کا صرف چند ماہ میں حلیہ بگاڑ دیا گیا ہے ،اور میڈیکل پر ریٹائرمنٹ کا نیا شوشہ چھوڑ کر روزانہ سینکڑوں ملازمین سبکدوش ہو رہے ہیں،سردار بابک نے کہا کہ عدلیہ کو سرکاری ملازمین کے سیاسی انتقام کے طور پر کئےء جانے والے تبادلوں کا نوٹس لینا چاہئے ، انہوں نے کہا کہ صوبے کے وسائل اور حکومتی اختیار کو ذاتی جاگیر سمجھ کر استعمال کرنا قانونی اور آئینی طور پر اختیارات کا ناجائز استعمال ہے جس کی صوبائی حکومت روزانہ کی بنیاد پر مرتکب ہو رہی ہے،انہوں نے مزید کہا کہ سرکاری ملازمین کی پوسٹنگ اور ٹرانسفر کا قانونی طریقہ کار موجود ہے اور حکومت کو آئین و قانون کے مطابق برتاؤ کرنا چاہئے ، انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کی گزشتہ صوبائی حکومت نے سرکاری ملازمین کی حددرجہ تذلیل کی جس کے باعث صوبے کو بے پناہ نقصان اٹھانا پڑا۔