انقلابی اصلاحات کیلئے تمام سٹیک ہولڈرز کی مشاورت سے آگے بڑھیں گے، میاں افتخار حسین

حکومت میں آ کر صوبے کے خزانے کو اپنے پاؤں پر کھڑا کرنے کے ساتھ ساتھ ترقی کا عمل دوبارہ شروع کریں گے۔

میرٹ کی بنیاد پرروزگار فراہم کرنا اولیں ترجیح ہو گی ، بے روزگارکئے جانے والے افراد کو دوبارہ ملازمتیں دیں گے۔

گزشتہ حکومت نے تبدیلی کی اصلیت واضح کر دی ، عوام کی اے این پی کی جانب رغبت اور تعاون قابل دید ہے۔

صوبے کی تاریخ کا سب سے بڑا قرض اتارنے کیلئے آنے والی حکومتوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑے گا۔

اقتدار میں آنے کے بعد تعمیر و ترقی کے کاموں میں کوئی کسر اٹھا نہیں رکھی جائے گی، بالو اورنگ آباد میں انتخابی مہم کے دوران خطاب

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی جنرل سیکرٹری میاں افتخار حسین نے کہا ہے کہ 25جولائی کو اے این پی قوم کو سرپرائز دے گی اور خیبر پختونخوا کی تباہی کے ذمہ دارعوام کا سامنا نہیں کر سکیں گے ، حکومت میں آ کر صوبے کے خزانے کو اپنے پاؤں پر کھڑا کرنے کے ساتھ ساتھ ترقی کا عمل دوبارہ شروع کریں گے ، ان خیالات کا اظہار انہوں نے یونین کونسل بالو اورنگ آباد میں مختلف شمولیتی تقریبات سے خطاب کرتے ہوئے کیا ، اس موقع پر اورنگ آباد کی نامور سیاسی و سماجی شخصیات حاجی دولت خان اور اسلم خان نے اپنے خاندان اور ساتھیوں سمیت اے این پی میں شمولیت اور الیکشن میں میاں افتخار حسین کی حمایت کا اعلان کر دیا ، میاں افتخار حسین نے شامل ہونے والوں کو سرخ ٹوپیاں پہنائیں اور انہیں مبارکباد پیش کرتے ہوئے اپنی حمایت پر ان کا شکریہ ادا کیا ، اپنے خطاب میں انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کی گزشتہ حکومت نے تبدیلی کی اصلیت واضح کر دی ہے لہٰذا اب عوام کی اے این پی کی جانب رغبت اور تعاون جبکہ کارکنوں کے جذبے قابل دید ہیں ،انہوں نے کہا کہ آئندہ الیکشن میں حکومت میں آنے کے بعد عوام کے اشتراک سے تعلیم اور صحت کی بہتر سہولیات یقینی بنانے کیلئے عملی اقدامات اٹھائیں گے،انہوں نے کہا کہ میرٹ کی بنیاد پرروزگار فراہم کرنا اولیں ترجیح ہو گی ، بے روزگارکئے جانے والے افراد کو دوبارہ ملازمتیں دیں گے۔ صوبے کی معاشی و اقتصادی ترقی کیلئے مستقل اور ٹھوس بنیادوں پر زمینی حقائق کے مطابق منصوبہ بندی کر لی ہے ، انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کی سابق حکومت نے صوبے کو مالی اور انتظامی بدحالی کا شکار کر دیا ہے،انہوں نے کہا کہ اقتدار میں آنے کے بعد تعمیر و ترقی کے کاموں میں کوئی کسر اٹھا نہیں رکھی جائے گی اور اے این پی عوامی مفاد کے منصوبوں پر بھرپور توجہ دے گی ، میاں افتخار حسین نے کہا کہ پی ٹی آئی کی گزشتہ حکومت نے صوبے کا خزانہ خالی کر دیا اور600ارب روپے کے خسارے کے ساتھ ساتھ300ارب روپے کا قرض عوام کے گلے کا ہار بنا دیا ،جسے اتارنے کیلئے آنے والی حکوموتوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑے گا، انہوں نے کہا کہ تبدیلی سرکار کے دعوؤں کی حقیقت عوام جان گئے ہیں ، انہوں نے کہا کہ حکومت میں آنے کے بعد تمام شعبوں میں اصلاحات اور مفاد عامہ کے مطابق تمام سٹیک ہولڈرز کی مشاورت سے آگے بڑھیں گے خصوصاً تعلیمی نصاب کو حقیقی معنوں میں تاریخی، سماجی،معاشرتی، سائنسی اور جدید دور کے مطابق بنانے کیلئے پوری تیاری ، سنجیدگی اور مشاورت سے کام کا آغاز کریں گے، انہوں نے پارٹی کارکنوں پر زور دیا کہ اپنی تمام توانائیاں بروئے کار لائیں اور الیکشن کی سرگرمیوں میں کوئی کسر اٹھا نہ رکھی جائے۔