وزارت عظمیٰ کیلئے پختونوں کے کندھے استعمال کرنا بدترین سیاست ہے،امیر حیدر خان ہوتی

الیکشن میں پختون قوم کی قسمت کا فیصلہ ہونے جا رہا ہے ،حکومت میں آکر عوامی خدمت کی نئی تاریخ رقم کریں گے۔

سابق وزیر اعلیٰ نے پانچ سال دھرنوں ، ناچ گانے اور خزانے کی لوٹ مار میں گزار دیئے۔

صوبے اور مرکز میں اقتدار کے مزے لوٹنے والوں کو اسلام خطرے میں نظر آنے لگا ہے۔

سینیٹ انتخابات میں کوڑیوں کے مول بکنے والے عوام کو بے وقوف نہیں بنا سکتے ۔
نواز شریف نے تیس سالہ دور اقتدار میں پختونوں کو ان کے جائز حقوق سے محروم رکھا ۔

سند یافتہ لوٹے اکٹھے کرکے ضمیر فروشی کی نئی مثال قائم کی گئی ہے ، دیر لوئر میں ورکرز کنونشن سے خطاب

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر امیر حیدر خان ہوتی نے کہا ہے کہ آنے والے الیکشن میں پختون قوم کی قسمت کا فیصلہ ہونے جا رہا ہے ،حکومت میں آئے تو عوامی خدمت کی نئی تاریخ رقم کریں گے ، ان خیالات کا اظہار انہوں نے دیر لوئر میں این اے6اور پی کے13کے مشترکہ ورکرز کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کیا ، اس موقع پر پی ٹی آئی کی اہم سیاسی شخصیات نے اے این پی میں شمولیت کا اعلان کیا ، اے این پی کی مرکزی ترجمان زاہد خان اور ملک محمد زیب نے بھی اس موقع پر خطاب کیا ، امیر حیدر خان ہوتی نے پارٹی میں شامل ہونے والوں کو سرخ ٹوپیاں پہنائیں اور انہیں مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہا کہ عوام کی اکثریت کا رجحان اے این پی کی طرف ہے ، سابق حکومت نے جس طرح پختونوں کو محرومیوں کے اندھیروں میں دھکیلا وہ ایک تاریک باب ہے ، انہوں نے کہا کہ سابق وزیر اعلیٰ نے پانچ سال دھرنوں میں ناچ گانے اور خزانے کی لوٹ مار میں گزار دیئے ،انہوں نے کہا کہ آج سرکاری ملازمین کو تنخواہوں اور پنشن ادا کرنے کیلئے خزانے میں رقم موجود نہیں جس کی اے این پی ایک عرصہ سے نشاندہی کرتی آئی ہے ، امیر حیدر خان ہوتی نے مزید کہا کہ نواز شریف تیس سال تک اقتدار میں رہے لیکن کبھی بھی پختونوں کو حقوق نہیں دیئے اور آج پھر ایک بار الیکشن سے قبل خیبر پختونخوا سے ووٹ مانگنے کیلئے ن لیگ سرگرم ہے ، جو صوبے اور مرکز میں اقتدار کے مزے لیتے رہے انہیں پانچ سال بعد حکومتیں ختم ہونے پر اسلام خطرے میں نظر آنے لگا ہے، انہوں نے کہا کہ دراصل اسلام کو نہیں ایسے لوگوں کی اپنی سیاست خطرے میں ہے ، انہوں نے اس امر پر حیرت کا اظہار کیا کہ عمران خان سیاست سے گند اور کرپشن ختم کرنے کیلئے نکلے تو ضمیر فروشوں کا ٹولہ لے کر پارٹی میں شامل کر لیا ، سند یافتہ لوٹوں کو ٹکٹ جاری کر کے کپتان نے اپنے ہی کارکنوں کی تذلیل کی، امیر حیدر ہوتی نے کہا کہ پنجاب کے ووٹ بنک اور وزارت عظمیٰ کیلئے پختونوں کے کندھے استعمال کرنا بدترین سیاست ہے جس کی ہم کسی طور اجازت نہیں دیں گے ۔انہوں نے کہا کہ سینیٹ انتخابات میں کوڑیوں کے مول بکنے والے عوام کو بے وقوف نہیں بنا سکتے ، جس نے تبدیلی دیکھنی ہے وہ پشاور جائے اور دیکھے کہ پانچ سال میں شہر کو کس طرح اجار دیا گیا ہے۔انہوں نے کارکنوں پر زور دیا کہ الیکشن مہم میں تیزی لائیں اور25جولائی کو دیر لوئر سے کامیابی کی نوید سنائیں۔