صوبے میں بدامنی اور بد حالی کی سیاہ رات ڈھلنے والی ہے، امیر حیدر خان ہوتی

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدرامیر حیدر خان ہوتی نے مارچ کے پہلے ہفتے سے تمام اضلاع اور قبائلی علاقوں میں بڑے جلسہ عام منعقد کرنے کا اعلان کرتے ہوئے تمام پارٹی عہدیداروں اور کارکنوں کو پارٹی سرگرمیاں تیز کرنے کی ہدایت کی ہے اور کہا ہے کہ صوبے میں بد امنی اور بدحالی کی سیاہ رات ڈھلنے والی ہے ، آئندہ الیکشن کیلئے صوبہ بھر میں عوام کو مزید متحرک اور رابطہ عوام مہم میں تیزی لانے کیلئے تمام ٹھوس اقدامات کئے جائیں ، ان خیالات کا اظہار انہوں نے باچا خان مرکز میں پارلیمانی بورڈ کے اجلاس کے دوران کیا، امیر حیدر خان ہوتی نے کہا کہ صوبے کے طول و عرض میں سرکردہ سیاسی شخصیات اے این پی میں شمولیت اختیار کریں گی ، انہوں نے خصوصی طور پر شعراء کا بھی ذکر کیا اور کہا کہ پختون شعرا پارٹی کا قیمتی سرمایہ ہیں اور وہ اپنے وطن دوست اور پختون دوست شعاری مجموعات کے ذریعے باچا خان بابا کا پیغام عام کرنے کیلئے اپنی توانائیاں صرف کریں،انہوں نے کہا کہ 2018اے این پی کی کامیابی کا سال ہو گا ،پختون اب باچاخانی چاہتے ہیں گذشتہ ساڑھے چار سال میں تبدیلی والوں نے مسائل کے حل کے لئے کوئی قدم نہیں اٹھایا بلکہ صوبے کو مالی طور پر دیوالیہ کر دیا ہے ، بد انتظامی اور بد امنی اپنے عروج پر ہے ، انہوں نے کہاکہ عمران خان پنجاب کو خوش کرنے کے لئے پنجاب میں کھڑے ہوکر پنجابی کے حقوق کی بات کرتے ہیں جبکہ خیبرپختون خوا کے مینڈیٹ کا کوئی خیال نہیں رکھاجارہا، امیرحیدرخان نے کہاکہ حقیقی تبدیلی اے این پی لے کر آئے گی اور عوام کے غصب شدہ حقوق کے حصول اور ان کے تحفظ کیلئے ماضی کی طرح مستقبل میں بھی تمام کاوشیں جاری رکھی جائیں گی،انہوں نے کہا کہ عوام مایوس نہ ہوں صوبے کے وسائل اپنے چہیتوں میں تقسیم کرنے والوں کا کڑا احتساب کریں گے ،امیرحیدرخان ہوتی نے کہاکہ صوبے کی آمدن کے مستقل اور بڑے ذخائر اقربا پروری کی نذر ہو گئے ہیں جبکہ اسمبلی میں عددی اکثریت کی بنیاد پر اپنوں کو نوازنے کیلئے قانون سازی کر کے اختیارات کا ناجائز استعمال کیا گیا ہے، حکومت کی ناقص پالیسیوں کی وجہ سے بے روزگاری میں اضافہ ہوا اور تاج و کاروباری طبقہ صوبے سے ہجرت کرنے پر مجبور ہو گیا،انہوں نے کہا کہ پختون عوام نام نہاد تبدیلی والوں کی اصلیت جان چکے ہیں انہوں نے کہاکہ ہم نے اپنے دور میں دس یونیورسٹیاں بنائیں جبکہ ہمارے دورحکومت میں خزانہ بھراتھا آج صوبہ مالی ،انتظامی اور سیاسی لحاظ سے دیوالیہ ہوچکاہے اے این پی کے صوبائی صدر نے کہاکہ پختون قوم کے ساتھ جتنے بھی وعدے کئے گئے تھے چار سال گزرنے کے باوجود کوئی بھی وعدہ پورانہیں کیاگیا اوراب پختون قوم باچاخانی چاہتی ہے، امیرحیدرخان ہوتی نے کہاکہ 2018کے انتخابات میں کامیابی اے این پی کی ہوگی۔صوبائی صدر نے تمام عہدیداروں پر زور دیا کہ وہ رابطہ عوام مہم میں تیزی لائیں اور عوام کو مزید متحرک کرنے کیلئے پارٹی کا پیغام گھر گھر پہنچائیں۔