پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کی رکن صوبائی اسمبلی ثمر ہارون بلور نے کہا ہے کہ کہ ملک کسی غیر یقینی صورتحال کا متحمل نہیں ہو سکتا اور جمہوریت کی بقاء کیلئے سب کو مدبرانہ سوچ اپنانا ہو گی ،اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ اے این پی نے ہمیشہ جمہوریت کی بقا کیلئے قربانی دی ہے اور کبھی کسی غیر آئینی قوت کے سامنے سر نہیں جھکایا، دہشت گردی کے خلاف جو قربانی اے این پی نے دی پوری دنیا اس کی معترف ہے ، اور اب بھی ہم جمہوریت کے ساتھ ہیں جمہوریت ڈی ریل ہوئی تو ملک و قوم دونوں کو نقصان ہوگا، انہوں نے کہا کہ ملک کو غیر یقینی صورتحال کا سامنا ہے ،ایسے میں تدبر اور حوصلے سے کام نہ لیا گیا تو ذرا سی ؂ غلطی کسی بھی بڑے سانحہ کا سبب بن سکتی ہے،انہوں نے کہا کہ حکمران کسی غلط فہمی میں نہ رہیں ملک میں جاری متعصبانہ احتساب سے اپوزیشن کو کمزور نہیں کیا جا سکتا ،انہوں نے ایک بار پھر بلا امتیاز ،شفاف اور غیر جانبدارانہ احتساب پر زور دیتے ہوئے کہا کہ احتسابی ادارے مسند اقتدار پر بیٹھے لوگوں پر بھی ہاتھ ڈالیں۔
ثمر ہارون بلور نے مزید کہا کہ موجودہ صوبائی حکومت سے عوام دوست پالیسیوں کی توقع رکھنا عبث ہے، تصوراتی ایجنڈے،غیر ذمہ دارانہ رویے اور غلط پالیسیوں کی وجہ سے صوبہ مسائل کی دلدل میں دھنستاجا رہا ہے ، انہوں نے کہا کہ انتظامی امور سے نا بلد حکو مت کے دور میں ہر طبقہ فکر کے لوگ سراپا احتجاج ہیں،عوامی مسائل کا ادراک نہ رکنھے والی حکومت نہ صرف یہ کہ صوبے کے محدود وسائل استعمال کرنے میں ناکام ہو گئی ہے بلکہ صوبے کو تاریخ کے بدترین مالی و انتظامی بحران سے دوچار کر دیا ہے ، انہوں نے کہا کہ صوبے میں ترقی کا پہیہ رک گیا ہے ،اور تمام امور ٹھپ ہو کر رہ گئے ہیں،جس کا خمیازہ دہشت گردی کے مارے عوام بھگت رہے ہیں،انہوں نے کہا کہ وفاق اور صوبے میں ایک ہی جماعت کی حکومتیں ہونے کے باوجود صوبائی حکومت مرکز سے حقوق کے حصول میں ناکام ہے،خیبر پختونخوا کے وسائل سے صوبے کے عوام محروم ہیں جس کی وجہ سے عوام میں احساس محرومی بڑھتا جا رہا ہے، ثمر بلور نے کہا کہ صوبے کے مسائل پارلیمنٹ اور پارلیمنٹ سے باہر ہر فورم پر اجاگر کئے جائیں گے ، اور صوبے کے حقوق پر بطور اپوزیشن کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا، انہوں نے واضح کیا کہ اے این پی اپوزیشن میں رہ کر صوبے اور عوام کے مسائل پر توجہ مرکوز رکھے گی۔