نئے پاکستان بنانے کیلئے آزاد ممبران کی بولیاں لگائی جارہی ہیں ، سردار حسین بابک

*نئے پاکستان کے بانی حکومت سازی کیلئے ہر جائز وناجائز طریقہ استعمال کرنے میں مصروف ہیں۔

*ہارس ٹریڈنگ سے بننے والی حکومتیں کونسی اصلاحات اور بہتری لاسکیں گی

*حکومتیں بنانے کے جنونی ملک میں جمہوری روایات کا مذاق اڑارہے ہیں۔

*جائز وناجائز پر دن رات لیکچر دینے والے تحت اسلام آباد کے حصول کیلئے ہر حربہ استعمال کررہے ہیں۔

*مذہبی وسیاسی جماعتوں کا اتحاد خوش آئند ہے، جدوجہد میں تیزی لانی ہوگی۔

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ 25 جولائی کو ایک پارٹی کو برسراقتدار لانے کیلئے ہر قسم کے حربے استعمال کرنے کے بعد اب سارے ملک میں جہانگیرترین اینڈ کمپنی کی خدمات حاصل کرکے حکومتیں بنانے کیلئے اربوں روپیہ استعمال ہورہا ہے اور حکومتیں بنانے کا آغاز بدترین ہارس ٹریڈنگ سے شروع کی گئی ہے۔ ہارس ٹریڈنگ سے بننے والی حکومتیں کونسی اصلاحات اور بہتری لاسکیں گی؟ انہوں نے کہا کہ آج نئے پاکستان کے بانی حکومتیں بنانے کیلئے تمام طریقہ واردات کے استعمال میں کوئی دقیقہ ضائع نہیں کررہے۔ آج حکومتیں بنانے کیلئے اربوں خرچ کرنے والے کیا اس ملک کے وسائل سے اپنی سرمایہ کاری اور خسارہ پورا نہیں کرینگے؟ کرپشن کے خاتمے اور احتساب کا ڈھونگ رچانے والے کرپشن کسے کہتے ہیں؟ نومنتخب ممبر پختونخوا اسمبلی نے مزید کہا کہ ملک کی بدقسمتی ہے کہ بار بار اور ہر مرحلے پر جمہوریت پر وار کئے جارہے ہیں۔ حکومتیں بنانے کے جنونی ملک میں جمہوریت کا مذاق اڑارہے ہیں۔ ماضی میں جائز اور ناجائز پر دن رات لیکچر دینے والے نئے پاکستان کے بانی آج تحت اسلام آباد کے حصول کیلئے سب کچھ کرنا جائز سمجھ رہے ہیں۔ سردارحسین بابک نے کہا کہ مذہبی اور سیاسی جماعتوں کا اتحاد خوش آئند ہے اور انہیں جمہوریت کی مضبوطی، ملکی سلامتی اور ہارس ٹریڈنگ کے روک تھام کیلئے اپنی جدوجہد میں تیزی لانی ہوگی۔