مرکزی مشاورتی کمیٹی کا اجلاس

پختونوں کو درپیش مشکلات ، اے این پی کا ( اے پی سی) بلانے کا فیصلہ

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی نے دور حاضر میں پختونوں کو درپیش مسائل و مشکلات کے دائمی حل کیلئے آل پارٹیز کانفرنس بلانے کا فیصلہ کیا ہے اور کہا ہے کہ ان تمام مسائل و مشکلات کے حل کیلئے اپنی آئینی ، قانونی، جمہوری اور پارلیمانی طریقے سے جدوجہد جاری رکھیں گے، اس بات کا فیصلہ اے این پی کے تھنک ٹینک اجلاس میں کیا گیا جو ولی باغ چارسدہ میں پارٹی کے مرکزی صدر اسفندیار ولی خان کی زیر صدارت منعقد ہو ا، مشاورتی کمیٹی کے تمام ممبران نے اجلاس میں بھرپور شرکت کی ،اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے اسفندیار ولی خان نے کہا کہ اس حوالے سے آل پارٹیز کانفرنس بلائی جائے گی تاہم اس کی حتمی تاریخ کا اعلان بعد مین کیا جائے گا،انہوں نے فاٹا انضمام میں تاخیر پر افسوس کا اظہار کیا اور کہا کہ بلا ضرورت لیت و لعل اور تاخیر مزید پیچیدہ مسائل کو جنم دے گی،انہوں نے کہا کہ فاٹا کو آئندہ الیکشن سے قبل صوبے میں ضم کر کے صوبائی اسمبلی میں نمائندگی دی جائے اور آئین میں ترمیم کر کے صوبائی کابینہ میں فاٹا کا حصہ مختص کیا جائے ،انہوں نے کہا کہ فاٹا دہشت گردی سے متاثر ہوا ہے لہٰذا اس کی ترقی کیلئے مالی پیکج کو بھی یقینی بنایا جائے، اسفندیار ولی خان نے کہا کہ فاٹا کے بیشتر علاقوں میں بچھی مائینز سے کئی قیمتی جانیں ضائع ہو چکی ہیں لہٰذا مزید جانی نقصان روکنے کیلئے ان مائینز کو صاف کرنے کے عمل کو تیز کیا جائے اور دہشت گردی و بارودی سرنگوں کے نتیجے میں شہید ہونے والوں کے ورثا کو شہداء پیکج دینے کے فیصلے پر عمل درآمد یقینی بنایا جائے ، انہوں نے کہا کہ طویل عرصہ سے جگہ جگہ قائم چیک پوسٹوں نے مردو خواتین بچوں ، بزرگوں اور بیماروں کو مزید ذہنی کرب میں مبتلا کر رکھا ہے جس سے مسائل میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے انہوں نے مطالبہ کیا کہ فوری طور پر غیر ضروری چیک پوسٹوں کو مکمل طور پر ختم کیا جائیاور اس کے ساتھ ساتھ مختلف علاقون میں جاری ہفتہ وار کرفیو کا خاتمہ کیا جائے ، انہوں نے کہا کہ ٹارگٹ کلنگ کے سدباب کیلئے بھی سنجیدہ اقدامات کئے جائیں اور نقیب اللہ محسود سمیت تمام بے گناہ افراد کی ہلاکت کی تحقیقات کر کے ملوث مجرموں کو قرار واقعی سزا دی جائے ،انہوں نے اس عزم کا اعادہ کیا کہ دہشت گردی کے مارے پختونوں ، کاروبار ، ملازمت اور محنت مزدوری کیلئے جانے والے پختونوں کے جان و مال کے تحفظ اور عزت نفس کو بحال رکھنے کیلئے کوئی کوتاہی برداشت نہیں کی جائے گی،ملک کی سیاسی صورتحال کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ 18ویں ترمیم کو چھیڑنے کے بھیانک نتائج سامنے آئیں گے اور اے این پی ایسی کسی بھی کوشش یا سازش کو کامیاب نہیں ہونے دے گی، انہوں نے کہا کہ صوبوں کی خود مختاری پر کوئی آنچ نہیں آنے دیں گے ،اسفندیار ولی خان نے کہا کہ سی پیک میں پختونوں اور خصوصاً فاٹا کو یکسر نظر انداز کرنا ملک کی سلامتی کیلئے خطر ناک ہے، انہوں نے کہا کہ چینی سفیر کے ساتھ ملاقات اور ان کی طرف سے یقین دہانی کے باوجود فاٹا اور پختونوں کو سی پیک کے ثمرات سے محروم رکھنا افسوسناک ہے ، انہوں نے کہا کہ ہم پختونوں کے حقوق اور بقاء کی جنگ آخر دم تک لڑیں گے، اسفندیار ولی خان نے تمام صوبوں کی تنظیموں کو بھی ہدایات جاری کیں کہ آئندہ الیکشن کیلئے اپنی تیاریاں بھرپور طریقے سے جاری رکھیں اور اس سلسلے میں رابطہ عام مہم میں مزید تیزی لائیں۔