اے این پی نے مردم شماری کے نتائج پر تحفظات کا اظہار کر دیا۔

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی صدر اسفندیار ولی خان نے حالیہ مردم شماری کے نتائج پر تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ قبائلی عوام کے ساتھ ایک بار پھر دغا کر دیا گیا ہے، ملک کے مختلف شہروں سے مردم شماری نتائج پر تحفظات سامنے آ رہے ہیں ،اور گمان شاید ہے کہ صوبہ پختونخوا اور بالخصوص فاٹا کے ساتھ حقوق کے حوالے سے بھر زیدتی کی گئی ہے ، اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ مردم شماری پہلے ہی 18سال تاخیر کے ساتھ کی گئی انہوں نے مزید کہا کہ مردم شماری میں حقائق سے پہلو تہی سے چھوٹوں صوبوں کے خدشات اور تحفظات کم ہونے کی بجائے بڑھ گئے اور ایک سوچھے سمجھے منصوبے کے تحت ملک کے ایک صوبے کو نوازنے کیلئے تگ و دو کی گئی جس سے دیگر صوبوں میں احساس محرومی بڑھا۔اسفندیار ولی خان نے کہا کہ 1998 کی مردم شماری کے بعد صوبوں کی آبادی میں بے تحاشہ اضافہ ہو چکا ہے مگر وسائل کی تقسیم روکنے کی خاطر اعدادو شمار میں ردو بدل کیا گیا۔اانہوں نے کہا قبائلی عوام کو ان کے جائز حقوق سے مھروم کرنے کی کوششیں ناکام ہونگی ۔