ملک کی سیاسی اور بین الاقوامی صورتحال کا مقابلہ کرنے کیلئے اتحاد و اتفاق بہترین ہتھیار ہے، امیر حیدر خان ہوتی
پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر امیر حیدر خان ہوتی نے کہا ہے کہ پختونوں کی ترقی کا راز ان کے اتحاد و اتفاق میں مضمر ہے، آج ہمیں جن مشکلات اور آزمائشوں کا سامنا ہے ان کا مقابلہ اتحاد سے ہی کیا جا سکتا ہے،ان خیالات کا اظہار انہوں نے حیات آباد پشاور میں منعقدہ ایک شمولیتی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا ، اس موقع پر نامور معروف سیاسی و سماجی شخصیت حاجی بہادر خان نے اے این پی میں شمولیت کا اعلان کر دیا ، امیر حیدر خان ہوتی نے انہیں سرخ ٹوپی پہنائی اور باچا خان کے قافلے میں شامل ہونے پر مبارکباد پیش کی ، اے این پی کے صوبائی جنرل سیکرٹری سردار حسین بابک اور دیگر رہنما بھی اس موقع پر موجود تھے، امیر حیدر خان ہوتی نے اپنے خطاب میں مزید کہا کہ موجودہ وقت اس بات کا متقاضی ہے کہ تمام پختونوں کو ذاتی مفادات سے بالاتر ہو کر قومی مفاد میں سوچنا ہوگا ، ملک کی سیاسی اور بین الاقوامی صورتحال بھی اس نہج پر ہے کہ اس کا مقابلہ کرنے کیلئے آپس میں اتحاد و اتفاق کا مظاہرہ کیا جائے ، انہوں نے امید ظاہر کی کہ حاجی بہادر خان کی شمولیت سے پارٹی مزید مضبوط ہو گی، صوبے کی مجموعی صورتحال کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ساڑھے چار سال میں صوبائی حکومت نے صوبے کو معاشی و انتظامی طور پر دیوالیہ کر دیا ہے اور عوام مسائل و مشکلات میں دلدل میں دھنس چکے ہیں ، انہوں نے کہا کہ ہم پر الزامات لگانے والے کچھ بھی ڈیلیور نہیں کر سکے اور صرف اے این پی کے منصوبوں پر تختیاں لگا کر اپنی مردہ سیاسی میں جان ڈالنے کی کوشش کرتے رہے ، امیر حیدر خان ہوتی نے کہا کہ رہی سہی کسر ڈینگی نے پوری کر دی اور صوبائی حکومت کا سوشل میڈیا پر جو بھرم تھا وہ بھی ڈینگی نے کھول دیا ، انہوں نے وائرس سے ہونے والی اموات پر افسوس کا اظہار کیا اور کہا کہ زیادہ تر اموات حکومتی بے توجہی کے باعث ہوئی ہیں ، این اے 4کا ذکر کرتے ہوئے امیر حیدر خان ہوتی نے کہا کہ ضمنی الیکشن میں اے این پی کی کامیابی یقینی ہے ،چار سال تک حلقے کو نظر انداز کرنے والے آج ترقیاتی کاموں کو سیاسی رشوت کے طور پر استعمال کر رہے ہیں، ہم نے اپنے پانچ سالہ دور اقتدار میں حکومت نہیں بلکہ جہاد کیا تھا، جتنے قرضے اس حکومت نے لئے ہیں صوبے کی تاریخ میں اس کی مثال نہیں ملتی ، امیر حیدر خان ہوتی نے کہا کہ مرکزی و صوبائی حکومت نے چار سال تک این اے4کو نظر انداز کئے رکھا ،عمران خان پختونوں کی قیمت پر پنجاب کی سیاست کرتے رہے اور تخت اسلام آباد کیلئے خیبر پختونخوا کے عوام اور وسائل کو لوٹا گیا ، لیکن اب جبکہ ضمنی الیکشن آیا تو پنجاب سے مایوس عناصر نے پھر خیبر پختونخوا کے عوام کو دھوکہ دینے کی ٹھان لی، تاہم عوام باشعور ہو چکے ہیں اور وہ جھوٹے وعدے کرنے والوں کو جان چکے ہیں اور وہ26اکتوبر کو عوامی مینڈیٹ کی توہین کرنے والوں کو آؤٹ کر دینگے۔