مورخہ : 23.6.2016 بروز جمعرات

عمران خان صوبے کو بدعنوانی کے ذریعے تباہ کرنے کے منصوبے پر عمل پیرا ہیں۔ زاہد خان
پی ٹی آئی حکومت عمران خان اور پرویز خٹک کی قیادت میں صوبے کے ہر شعبے میں بدعنوانی میں ملوث ہے۔
خیبر بنک لیکس کی آزادانہ تحقیقات شروع نہیں ہوئیں جبکہ اس کو نقصان پہنچانے والا اپنے عہدے پرموجود ہے۔

پشاور (پریس ریلیز) عوامی نیشنل پارٹی نے عمران خان کی جانب سے صوبہ خیبر پختونخوا کے مقامی دیانتدار اور مخلص سرکاری افسران کو استعفوں پر مجبور کر کے اورپرویز خٹک کے کاروباری حصہ داروں کے ذریعے صوبے کے ترقیاتی منصوبوں کی سربراہی دے کر بدعنوانی کے نہ ختم ہونے والے کاروبار کی پالیسی کی شدید مذمت کی ہے۔ عوامی نیشنل پارٹی کے ترجمان زاہد خان نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ خیبر پختونخوا کے چیف سیکرٹری کی وزیر اعلیٰ کے خلاف چارج شیٹ اور صوبہ خیبر پختونخوا میں وزیر اعلیٰ صوبائی کابینہ اور سرکاری اداروں میں بدعنوانی کے خلاف کارروائیوں میں رکاوٹوں کے خلاف صوبے کے ڈی جی احتساب اور ڈی جی اینٹی کرپشن کے ستعفے کے بعد پیڈو کے چیئرمین اور بورڈ آف ڈائریکٹر کے استعفوں نے ثابت کر دیا ہے کہ عمران خان صوبہ خیبر پختونخوا کو بدعنوانی کے ذریعے مکمل تباہ کرنے کے منصوبے پر عمل پیرا ہیں۔ زاہد خان نے مزید کہا کہ عوامی نیشنل پارٹی کی حکومت نے صوبائی سطح پر آل پارٹی کانفرنس کے متفقہ فیصلے کے ذریعے پبلک سیکٹر میں توانائی کے بحران کے مکمل خاتمے 24 منصوبوں پر کام کا آغاز کیا جس کے تحت 2014 تک 600 ، 2016تک 1000 اور 2002 میں 3500 میگا واٹ بجلی حاصل ہوئی تھی لیکن بدقسمتی سے بدعنوانی کے بادشاہ عمران خان نے بدعنوان گروہ کے سرغنہ وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا کے فرنٹ میں اس عمر کے ذریعے پیڈو کے منصوبوں کو پرائیویٹ سیکٹر کے ذریعے لوٹ مار کا بازار گرم کرنے کی کوشش کی جس پر صوبہ کے دیانتدار سرکاری افسران نے مستعفی ہو کر ثابت کیا ہے کہ پی ٹی آئی حکومت عمران خان اور پرویز خٹک کی قیادت میں صوبے کے ہر شعبے میں بدعنوانی میں ملوث ہے۔
زاہد خان نے کہا ہے کہ خیبر بنک لیکس کی ابھی تک تو آزادانہ تحقیقات شروع نہیں ہوئیں اور خیبر بنک کو ہڑپ کرنے والا وزیر خزانہ بھی اپنے عہدے پر براجمان ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ مشترکہ مفادات کونسل کے اجلاس وفاق سے صوبہ خیبر پختونخوا کے پن بجلی کے خالص منافع کے واجبات حاصل نہ کرنے والا وزیر اعلیٰ کس منہ سے واپڈا ہاؤس بند کرنے کا اعلان کر رہے ہیں۔