کراچی۔05جون 2016
رمضان المبارک کی آمد سے قبل اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں ہوش ربا اضافہ انتہائی ا فسوس ناک ہے ماہ مبارک سے کے آغاز سے قبل مہنگائی میں اضافہ ہماری مذہبی روایات اور اقدار کی نفی کرتا ہے یہ طرز عمل روزے کے بنیادی سبق کی کے برخلاف ہے ایک طرف جہاں کاروباری طبقے کو اپنی ذمہ داریوں کا احساس کرنا چاہیے دوسری طرف ارباب اختیار بھی اپنے فرائض کی تکمیل میں کوتاہی برتنے سے اجتناب کرنا چاہیے ہر سال پوری دنیا کے برخلاف رحمتوں اور برکتوں کے مہینے میں گرانی کی روایت کی روک تھام کے لیے ٹھوس اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے ان خیالات کا اظہار عوامی نیشنل پارٹی کے ڈپٹی جنرل سیکریٹری الطاف خان ایڈووکیٹ،صوبائی نائب صدر حاجی اورنگ زیب بونیری ،مرکزی رہنماء رانا گل آفریدی اور ضلع کورنگی کے سینئر نائب صدر حنیف اللہ بونیری نے باچا خان مرکز میں مختلف پارٹی وفود سے ملاقات کرتے ہوئے کیا انہوں نے مذید کہا کہ رمضان المبارک کی آمد سے قبل گران فروشی کی روک تھام کے لیے حکومتی اقدامات کے اعلانات اب صرف روایت بن رہ گئے ہیں چند سو افراد کو گرفتار کرکے اپنی جان چھڑانے کی کوشش کی جائے گی اصل مسئلہ ڈیمانڈ اور سپلائی میں عدم توازن ہے جس کی طرف کبھی توجہ نہیں دی گئی ضرورت اس امر کی ہے متعلقہ محکمے اپنی داریوں کا احساس کریں اور روزہ داران کو ہر سال ذہنی اذیت اور معاشی مسائل سے چھٹکارا دلانے کے لیے اپنے فرائض کی تکمیل کرتے ہوئے گران فروشی کی روک تھام کریں،پارٹی رہنماؤں نے مذید کہا کہ کے الیکٹرک ایک بے لگام عفریت بن چکا ہے بجلی کے کم وولٹیج اور غیر اعلانیہ بندش سے شہری سخت اذیت میں مبتلا ہیں دوسری طرف بجلی کے ماہانہ بل شہریوں کے ہوش اڑارہے ہیں ہمارا وفاقی حکومت سے مطالبہ ہے کہ وہ کراچی کے شہریوں سے زیادتیوں کا فی الفور نوٹس لے رہنماؤں نے مذید کہا کہشہر میں سیوریج کا نظاب پہلے ہی تباہی کے دہانے پر ہے متوقع شدید بارشوں سے شہر کا نظام زندگی مفلوج ہونے کا شدید خطرہ ہے برساتی نالوں کی صفائی کے اقدامات صرف فائلوں کا پیٹ بھرنے کے لیے ہے حکومت اور ارباب اختیار کی نا اہلی کی وجہ سے باران رحمت باعث زحمت بن جاتی ہے اور شہری اپنی مدد آپ کے تحت اقدامات پر مجبور ہوتے ہیں ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ شہر میں متوقع بارشوں کے اعلانات کے بعد متعلقہ محکمے فی الفور اپنی تیاریوں کا آغاز کردیں تاکہ جس قدر ممکن ہوسکے شہریوں کی مشکلات میں کمی واقع ہوسکے ۔